1. Photo of Milford Sound in New Zealand
  2. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  3. Photo of Milford Sound in New Zealand
  4. Photo of Milford Sound in New Zealand

قومی اسمبلی میں گیارھواں دن

محمدابوبکرصدیق نے '1974ء قومی اسمبلی کی مکمل کاروائی' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ جنوری 16, 2015

لڑی کی کیفیت :
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں
  1. ‏ جنوری 16, 2015 #11
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (عبداﷲ آتھم کی پیش گوئی؟)
    جناب یحییٰ بختیار: ہاںجی، وہ میں نے پہلے اس کا ذِکر کیا تھا۔
    مرزا ناصر احمد: ہاں۔ یعنی میں نے اکٹھے کئے ہیں، جہاں آگے پیچھے پڑے ہوتے تھے۔ وہ جو آتھم کا مباحثہ ہوا، آتھم کے ساتھ، اس کے متعلق میں بتاچکا ہوں کہ جنڈیالہ کے مسلمانوں کی طرف سے زور دِیا گیا۔ اس کو دُہرانے کی ضرورت نہیں سمجھتا۔
    جناب یحییٰ بختیار: ’’جنگ مقدس‘‘؟
    مرزا ناصر احمد: ’’جنگ مقدس‘‘ اس کتاب کا نام ہے۔ پیش گوئی ’’تبلیغ رسالت‘‘ جلد سوئم، صفحہ:۹۶ پر یہ ہے: ’’دونوں فریقوں میں سے جو فریق عمداً جھوٹ کو اِختیار کر رہا ہے ۔۔۔۔۔۔ اور عاجز انسان کو خدا بنا رہا ہے وہ انہی دنوں مباحثہ کے لحاظ سے یعنی فی دن ایک مہینہ لے کر (معاف کریں) یعنی پندرہ ماہ تک ہاویہ میں گرایا جاوے گا اور اس کو سخت ذِلت پہنچے گی بشرطیکہ حق کی طرف رُجوع نہ کرے اور جو شخص سچ پر ہے اور سچے خدا کو مانتا ہے، (خدائے واحد ویگانہ کو)، اس کی اس سے عزت ظاہر ہوگی۔‘‘
    (جنگ مقدس ص:۱۸۹، خزائن ج:۶ ص:۲۹۲)
    اس میں جو چیز اس وقت کچھ تفصیل سے بتانے والی ہے وہ ہے ’’بشرطیکہ۔‘‘ اُمتِ مسلمہ کا 1357متفقہ یہ فیصلہ ہے، تمام فرقوں اور اس اُمت کا شروع سے لے کر آج تک، کہ جو اِنذاری پیشین گوئیاں جو ہیں وہ مشروط رہتی ہیں۔ ’’مشروط‘‘ کا مطلب یہ ہے کہ اگر جس کے متعلق یہ کہا گیا کہ: ’’تمہاری یہ کیفیت ہے رُوحانی طور پر۔ تمہیں، اللہ تعالیٰ نے مجھے یہ اِطلاع دی ہے ___ کہنے والا کہتا ہے ___ یہ سزا ملے گی۔‘‘ اس کے ساتھ شرط ہوتی ہے۔ خواہ شرط کا ذِکر ہو یا نہ ہو۔ جیسا کہ مثلاً حضرت یونس علیہ السلام کی اُمت کے لئے ___ قرآن کریم میں اس کا ذِکر ہے ___ ایک پیش گوئی آئی کہ ان پر عذاب نازل ہوگا۔ لیکن ان کے اُوپر وقتِ مقرّرہ کے اندر عذاب نازل نہیں ہوا اور حضرت یونس علیہ السلام یہ سمجھے کہ میری پیش گوئی خداتعالیٰ نے مجھے بتایا تھا اور اس کو وہ کردیا، غلط ثابت ہوگئی۱؎ اور وہاں سے وہ بھاگے۔ وہ لمبا قصہ قرآن کریم میں ہے کہ وہ پھر قرعہ پڑا اور سمندر میں چھلانگ لگائی اور ایک وہیل مچھلی جو کہ بغیر چبائے کے اندر انسان کو نگل جاتی ہے، یا اور جو جانور اس کو مل جائے، وہ اس کے پیٹ میں چلے گئے۔ لیکن قبل اس کے کہ مچھلی کے پیٹ میں اس کے ایسے جسم پر اَثراَنداز ہوتے اور دَم نکلتا، خداتعالیٰ نے ایسا سامان پیدا کیا کہ کنارے پرجاکر مچھلی نے اُلٹی کی اور حضرت یونس علیہ السلام ریت کے اُوپر آگئے۔ وہ لمبا ایک قصہ ہے۔ بہرحال اس قصے سے تو ہمارا اس وقت تعلق نہیں ہے۔ ایک پیش گوئی ہوئی جو ان پر پوری نہیں ہوئی اور خداتعالیٰ نے کہا: قوم نے رُجوع کرلیا تھا، اس کو کیسے سزا مل سکتی تھی۔ یہ تین حوالے میں نے یہ لکھائے۔ اگر کہیں تو میں پڑھ دُوں، ورنہ یہ داخل کروادُوں گا۔ ایک علامہ ابوالفضل صاحب کی ’’رُوح المعانی‘‘ تفسیر کی کتاب ہے۔ اس کے اندر لکھتے ہیں کہ اِنذاری پیش گوئیاں جو ہیں، وہ توبہ اور رُجوع اور صدقہ وخیرات سے ٹل جاتی ہیں۔ دُوسرا حوالہ ہے اِمام فخرالدین رازی کا بڑے مشہور ہیں اور تیسرا حوالہ ہے صاحب ’’رُوح المعانی‘‘ کا، وہ پہلی کتاب کا دُوسرا حوالہ، صاحب ’’رُوح المعانی‘‘ کا دُوسرا حوالہ۔ اگر کہیں تو میں اسی طرح…
    جناب یحییٰ بختیار: داخل کروادیں۔
    مرزا ناصر احمد: تو میں اُصول یہ بتارہا تھا، اُصول، کہ جو اِنذاری پیش گوئیاں ہیں وہ دُعا 1358کے ساتھ اور توبہ کے ساتھ اور صدقہ کے ساتھ اور خداتعالیٰ کے حضور جھکنے کے ساتھ ٹل جاتی ہیں، اور اس میں کسی کو اِختلاف نہیں، قرآن کریم سے لے کر اس وقت تک یہ پیش گوئی اِنذاری ہے، آتھم کی: ’’اور بشرطیکہ حق کی طرف رُجوع نہ کرے۔‘‘
    چنانچہ اس نے رُجوع کیا اور جو معین عرصہ ۱۵مہینے کا تھا، وہ اس کے لئے ٹل گیا۔ لیکن پھر وہ اس میں ایک دلیری پیدا ہوئی۔ کچھ لوگوں نے اس کو اُکسایا۔ اس پر اِتمامِ حجت اتنا واضح ہوا
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    ۱؎ معاذاللہ! کذبِ محض ہے۔ تمام قوم یونس ایمان لے آئی۔ سورۃ یونس:۹۸ کے تحت تفصیل تفاسیر میں دیکھی جاسکتی ہے۔ سیدنا یونس علیہ السلام کی پیش گوئی غلط نہ ہوئی بلکہ اس کی غرض پوری ہوگئی کہ پوری قوم ان پر ایمان لا کر ان کی غلام بن گئی۔ تفصیل کتاب تذکرہ یونس مشمولہ احتساب قادیانیت ج۱۹ ص۳۱۵ سے ۳۴۵ تک دیکھا جاسکتا ہے۔
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    کہ اس کا وہ اِنکار نہیں کرسکا۔ بانیٔ سلسلۂ احمدیہ نے پہلے اسے یہ چیلنج کیا کہ ’’اگر تم اعلان کردو، اِشتہار دے دو، میں رُجوع نہیں ہوا حق کی طرف اور میری پیش گوئی جو ہے وہ غلط ثابت ہوتی ہے، تو تم پر عذاب نازل ہوجائے گا، میں تمہیں یہ بتاتا ہوں۔ تو اگر تم سمجھتے ہو کہ تم نے رُجوع نہیں کیا تو تم اِشتہار دو اور میں ایک ہزار روپیہ تمہیں اِنعام دُوں گا۔‘‘ جب اس کا اس نے مانا نہیں تو پھر کہا: ’’دو ہزار روپے اِنعام دُوں گا۔‘‘ یہ اس وقت کے روپے ہیں اور پھر اس نے یہ نہیں مانا تو پھر کہا: ’’میں تین ہزار روپے کا اِنعام دُوں گا۔‘‘ پھر اس نے نہیں مانا، یعنی یہ نہیں مانا کہ اعلان کرے کہ: ’’میں نے رُجوع نہیں کیا۔‘‘ ’’میں چار ہزار روپے کا اِنعام دُوں گا۔‘‘ چار دفعہ اِتمامِ حجت کرنے کے بعد آپ نے لکھا کہ: ’’تم نے رُجوع اِلی الحق تو کیا۔ یعنی تم نے جو یہ نبی کریمa کے خلاف۔ جہاں یہ ہے ’’رُجوع اِلی الحق ___ جو بدزبانی کی تھی، تمہارے دل میں یہ خوف پیدا ہوا کہ میں ایک پاک اور مطہر ذات کے خلاف میں نے بات کی ہے اور خداتعالیٰ کے عذاب کی گرفت میں آجاؤں گا۔‘‘ یہ ہے رُجوع۔ یعنی اپنا نہیں بیچ میں دخل کوئی اور ’’چونکہ تم نے جو رُجوع کیا اس کو چھپانے کی کوشش کر رہے ہو، اب میں تمہیں کہتا ہوں کہ تم عذاب میں مبتلا ہوجاؤگے۔‘‘ اور وہ بڑی لمبی تفصیل ہے اس عذاب کی جس میں وہ مبتلا ہوا اور اس جہان کو اس نے چھوڑا۔ تو اِنذاری پیش گوئی ہے، اِنذاری پیش گوئی ہے۔ رُجوع اِلی الحق اس نے کیا، وہ ٹلی۔ پھر اس نے، اس نے چھپانے کی کوشش کی، اور اِتمامِ حجت ہوا چار دفعہ۔ تب خداتعالیٰ کے عذاب نے اس کو پکڑا اور وہ ہر ایک کے اُوپر عیاں ہے، بہرحال یہ ہمارا وجوب ہے۔
    1359تیسری پیش گوئی ہے محمدی بیگم کی۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، اس پر ذرا میں کچھ۔۔۔۔۔۔
  2. ‏ جنوری 16, 2015 #12
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (عبداﷲ آتھم پندرہ مہینے کے اندر ہاویہ میں گرے گا)
    ایک تو مرزاصاحب نے یہ پیش گوئی کی تھی کہ: ’’پندرہ مہینے کے اندر یہ ہاویہ میں گرے گا اور ذلیل ہوگا۔۔۔۔۔۔‘‘
    مرزا ناصر احمد: ’’۔۔۔۔۔۔بشرطیکہ رُجوع اِلی الحق نہ کرے۔‘‘
    جناب یحییٰ بختیار: ’’۔۔۔۔۔۔بشرطیکہ وہ حق کی طرف رُجوع نہ کرے۔‘‘ پندرہ مہینے گزرگئے، یہ مرا نہیں، ذلیل نہیں ہوا، جیسا پیش گوئی میں تھا، Established Fact (ثابت شدہ حقیقت) اس کے بعد سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ وہ حق کی طرف رُجوع ہوا۔ مرزا صاحب کے کہنے کے مطابق، اس لئے یہ پیش گوئی ثابت نہیں ہوتی۔ اب مرزا صاحب نے تو اِشتہار میں دیا کہ وہ کہے کہ رُجوع ہوا یا نہ ہوا۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: آپ نے یہ چار دفعہ اس پر یہ اِتمامِ حجت کی اِنعام بڑھاکر کہ: ’’تم یہ اعلان کرو کہ میں رُجوع اِلی الحق نہیں ہوا۔‘‘ اسی نے کہنا تھا ناں، اس کے دل کی بات تھی۔
    جناب یحییٰ بختیار: ناں، میں یہ آپ سے یہ پوچھنا چاہتا ہوں، میں تو۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: اچھا، ابھی نہیں آیا۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں، پھر یہ کہ جب ایک آدمی حق کی طرف رُجوع کرتا ہے، اس کا یہی مطلب ہوتا ہے ناں کہ وہ توبہ کرلیتا ہے ایک قسم کا۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: ۔۔۔۔۔۔۔ اس بات سے جو اس نے کہی ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں۔
    مرزا ناصر احمد: توبہ کرکے، اسلام میں داخل نہیں، مراد۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، نہیں۔
    مرزا ناصر احمد: اس بات سے۔
    1360جناب یحییٰ بختیار: وہی میں کہہ رہا ہوں کہ اس نے گستاخیاں کی تھیں، اسلام پر حملے کئے تھے، آنحضرتﷺ کی شان میں گستاخیاں کی تھیں اور وہ حق کی طرف رُجوع ہوا تو اللہ تعالیٰ نے کہا کہ بھئی یہ ابھی توبہ کررہا ہے، اس لئے اس پر پیش گوئی ثابت نہیں ہوگی۔ معاف کردیا اس کو۔ میں یہ عرض کر رہا تھا۔ مرزا صاحب! کہ توبہ کا یہ مطلب ہے کہ وہ شخص جو اِسلام کے خلاف آنحضرتa کی شان میں گستاخیاں کررہا تھا، اس سے اس نے توبہ کرلی۔۔۔۔۔۔ اور دِلی توبہ ہی کرتا ہے انسان اللہ کے سامنے۔۔۔۔۔۔ تبھی اللہ نے اس کو معاف کردیا، اس نے اللہ کی طرف رُجوع کرلیا۔ مگر جب یہ پندرہ مہینے گزرگئے تو پھر امرتسر میں انہوں نے بہت بڑا جلوس نکالا ۔۔۔۔۔۔ عیسائیوں نے۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: ہاں، ہاں۔
  3. ‏ جنوری 16, 2015 #13
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (مرزا قادیانی کی پیش گوئی غلط ثابت ہوئی)
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔ جس میں مسلمان بھی کچھ شامل ہوئے، اور بڑی خوشیاں منائیں کہ مرزاصاحب کی پیش گوئی غلط ثابت ہوگئی اور اس شخص نے گستاخیاں پھر شروع کیں یہ بھی دُرست ہے؟
    مرزا ناصر احمد: اس نے اپنے رُجوع کو چھپایا۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، میں Facts (حقائق) آپ سے Verify (تصدیق) کروا رہا ہوں۔
    مرزا ناصر احمد: ہاں، رُجوع کو چھپایا۔ ہمارے علم میں پھر کبھی نہیں لکھا۔
    جناب یحییٰ بختیار: اس کے بعد تو یہ۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: اس کے بعد بھی نہیں لکھا۔
  4. ‏ جنوری 16, 2015 #14
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (عبداﷲ آتھم نے مرزا قادیانی کو چیلنج کیا)
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔ اس نے گستاخیاں کیں اور اس کے بعد اس نے Openly (کھلا) چیلنج کیا مرزاصاحب کو۔
    مرزا ناصر احمد: نہیں، نہیں، مرزا صاحب کا تو سوال ہی نہیں، وہ تو ایک خادم تھے۔ اس نے نبی کریمﷺ کے خلاف جو بدزبانی کیا کرتا تھا اُس میں پھر خود ملوث نہیں ہوا۔
    1361جناب یحییٰ بختیار: کوئی اسلام کے خلاف اس نے کوئی چیز نہیں کہی!
    مرزا ناصر احمد: ہمارے علم میں کوئی نہیں اور چھ مہینے کے اندر اندر پھر خدا کی گرفت…
    جناب یحییٰ بختیار: چھ، سات مہینے کے بعد اس کی وفات ہوئی تو یہی تو کہہ رہے ہیں کہ اس نے پھر گستاخیاں شروع کردیں تو وفات ہوئی؟
    مرزا ناصر احمد: نہ، نہ، نہ، اُوپر میں بات نہیں واضح کرسکتا اس کو۔ یہ شور مچایا عیسائیوں وغیرہ نے کہ پیش گوئی غلط نکلی۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا کہ: ’’پیش گوئی میں تھا ’بشرطیکہ رُجوع نہ کرے‘ رُجوع اِلی الحق نہ کرے اور اس نے رُجوع اِلی الحق کیا، ہمارے پاس ثبوت ہیں اور اگر یہ ہمیں غلط سمجھتا ہے تو یہ اعلان کرے کہ میں نے رُجوع اِلی الحق نہیں کیا۔‘‘ اور اس نے اس سے گریز کیا، اعلان کرنے سے۔ پھر آپ نے فرمایا کہ: ’’اگرچہ اس نے گریز کیا ہے اس اعلان سے کہ رُجوع اِلی الحق میں نے نہیں کیا، لیکن پھر بھی یہ اس نے کمزوری دِکھائی اور یہ چھپاتا ہے اپنے رُجوع کو۔ اس لئے اللہ تعالیٰ اس کو ۔۔۔۔۔۔۔ اللہ تعالیٰ کی گرفت میں آئے گا اور نبی اکرمﷺ کی صداقت ظاہر ہوگی۔‘‘
    جناب یحییٰ بختیار: یہ جو مرزا صاحب! یہ۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: یہ جو ہے ناں کہ وقتی طور پر عذاب کا اس طرح ٹل جانے، اس قسم کا، اس کے اُوپر قرآن کریم کی آیات کی تصدیق ہے۔ چنانچہ یہاں ’’سورۂ دُخان‘‘ کی یہ آیات میں کہ انہوں نے کہا: عذاب کی پیش گوئی کے بعد: ’’ربنا اکشف عنّا العذاب انا مؤمنون انی لہم الذکری وقد جائہم رسول مبین ثم تولوا عند وقالوا معلم مجنون‘‘
    1362اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: ’’انا کاشف العذاب قلیلا‘‘
    (ہم کچھ عرصے کے لئے عذاب کو ملتوی کردیں گے)
    لیکن توبہ نہیں کریں گے، ان کے حالات ایسے ہیں۔
    ’’انکم عائدون‘‘
    (تم پھر اپنی پہلی حالت کی طرف رُجوع کروگے۔۔۔۔۔۔۔ کسی نہ کسی شکل میں)
    ’’یوم نبطش البطشۃ ابکریٰ انا متغمون‘‘
  5. ‏ جنوری 16, 2015 #15
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (کیا مرزا قادیانی کا چیلنج عبداﷲ آتھم نے قبول کیا؟)
    جناب یحییٰ بختیار: یہ جو انہوں نے چیلنج کیا ان کو، ’’جنگ مقدس‘‘ میں یہ جو پیش گوئی کی، کیا آتھم نے اس کو منظور کیا کہ: ’’یہ چیلنج میں Accept (قبول) کرتا ہوں۔‘‘
    مرزا ناصر احمد: ہاں،ہاں۔ اس نے اِنکار نہیں کیا، اس طرح جس طرح مولوی ثناء اللہ صاحب نے کیا تھا۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں۔ تو یہی میں کہتا ہوں اس نے Accept (قبول) کیا۔ اس کے بعد اس نے کسی سے تو یہ بھی نہیں کہا کہ ’’میں نے رُجوع کیا۔‘‘ صرف آپ کہتے ہیں کہ اس نے مرزا صاحب کے اِشتہار کا جواب نہیں دیا۔
    مرزا ناصر احمد: نہیں، نہیں، اس نے کہا، اپنے ساتھیوں سے کہا۔ جب اُس کے ساتھیوں نے اس کو کہا۔ یہ میں نے بتایا، یہ بڑی لمبی بحث ہے۔ وہ اگر کہیں تو پڑھنا شروع کردیتا ہوں۱؎۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں۔
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    ۱؎ شیطان کی آنت کی طرح مرزاقادیانی کی لمبی لمبی عبارتیں پڑھنے کا کیا خطرناک ڈراوا تیار کر رکھا ہے۔۔۔! نہیں معلوم مرزا ناصر کو یہ بات کہ مرزا کی تحریریں نہ دِین کے کام کی نہ دُنیا کے کاموں کی۔ یہی وجہ ہے کہ کوئی اسے سننے کے لئے تیار نہیں، خود دوفیصد بھی قادیانی ایسے نہ ہوں گے جنہوں نے مرزا کی پوری کتابوں کو پڑھا ہو۔
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    مرزا ناصر احمد: تو وہ اپنے حلقوں میں اس نے کہا کہ: ’’یہ جو مجھ سے غلطی ہوئی ہے اور میں خداتعالیٰ کے عذاب کے نیچے ہوں۔‘‘ اس کا Nervous Braek Down (اعصابی نظام منتشر) ہوگیا تھا، خوف کے مارے، اس کو عجیب وغریب چیزیں، ہیولے نظر آنے لگ گئے تھے۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، نہیں، مرزا صاحب! وہ تو Psychological Effect (نفسیاتی اثر) لوگوں 1363پر پڑجاتا ہے۔
    Mirza Nasir Ahmad: Psychological Effect ......
    (مرزا ناصر احمد: نفسیاتی اثر۔۔۔۔۔)
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔ وہ تو میں پیش گوئی کی بات کر رہا ہوں۔
    مرزا ناصر احمد: محمد رسول اللہﷺ کی عظمت اور جلال سامنے رکھ کر یہ اس کے اُوپر یہ Psychological Effect (نفسیاتی اثر) ہوا ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: Psychological Effetc (نفسیاتی اثر) میں یہی کہہ رہا ہوں، میں یہی کہتا ہوں، Psychological Effect (نفسیاتی اثر) تو کسی طریقے سے بھی ہوسکتا ہے۔
    مرزا ناصر احمد: ہاں، ہاں، وہ ٹھیک ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: وہ اس پر ضرور ہوا ہوگا۔ مگر اس کے باوجود، میں کہتا ہوں، اُس نے اس کو Accept (قبول) بھی کیا اور پھر اس کی موت بھی نہیں ہوئی، اور پھر آپ کہتے ہیں کہ اس نے رُجوع کیا حق کی طرف۔ مسلمان تو خیر وہ نہیں ہوا۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: نہیں۔
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔ اس کے بعد وہ آتا ہے اور پھر وہ وہی حرکتیں کرتا ہے۔ آپ کہتے ہیں وہی حرکتیں اس نے نہیں کیں۔
    مرزا ناصر احمد: نہیں، میں یہ کہہ رہا ہوں۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔ ایک مشنری عیسائی اسلام کے خلاف کام کر رہا ہے، سات مہینے اور۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: ۔۔۔۔۔۔ اُس نے رُجوع اِلی الحق کو چھپانے کی حرکت کی، اور خداتعالیٰ نے جو نبی اکرمa کی عظمت کے قیام کے لئے ایک پیش گوئی کی تھی اس کو مشتبہ کرنے کی کوشش کی۔
    1364جناب یحییٰ بختیار: مرزا صاحب! صاف بات کہ جو میں اس کو Clarify (واضح) کرنا چاہتا ہوں کہ اللہ تعالیٰ کے سامنے اس نے رُجوع کیا، اللہ تعالیٰ ہر ایک کے دِل کو جانتا ہے، نیت کو جانتا ہے کہ یہ آدمی مجھے دھوکا دے رہا ہے، اس کو چھپائے گا اور اس کی نیت نہیں ہے، یہ پھر عیسائی ہوکے یہی حرکتیں کرے گا۔ کیوں اُس کی توبہ منظور کی؟
    مرزا ناصر احمد: یہ جو قرآن کریم کی آیت ہے، اس میں یہی ہے۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، میں یہی پوچھ رہا ہوں آپ سے۔
    مرزا ناصر احمد: نہیں، قرآن کریم کہتا ہے کہ ’’ہمیں علم ہے کہ یہ پھر یہی حرکتیں کردیں گے۔ لیکن عارضی طور پر ان کی دُعا کے نتیجے میں عذاب کو ٹال دیتے ہیں۔‘‘ وہ آیات تو میں نے یہی پیش کی ہیں یہاں اور فرعون کے متعلق قرآن کریم میں ہے کہ ۹دفعہ عذاب اُن کے اُوپر سے ٹالا گیا ہے، اس کے بعد دُوسرا آیا۔
  6. ‏ جنوری 16, 2015 #16
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (عبداﷲ آتھم نے کبھی نہیں کہا کہ میں نے رجوع کرلیا)
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، یہ تو مرزا صاحب! میرا خیال ہے اُس نے کبھی نہیں کہا کہ: ’’میں نے رُجوع کیا۔‘‘ آپ کہتے ہیں کہ Privately (پوشیدہ) کیا ہوگا۔ اِشتہار کے جوابوں میں کسی میں نہیں کہا اُس نے۔
    مرزا ناصر احمد: اُس نے رُجوع کیا اور دلیل یہ ہے کہ جب اس کو یہ کہا گیا کہ: ’’اگر تم نے رُجوع نہیں کیا تو اس کا اعلان کرو‘‘ تو اس طرف وہ آتا نہیں تھا۔ جس شخص نے رُجوع نہیں کیا تھا اور اُس کے پیچھے پڑے ہوئے تھے بانی سلسلۂ احمدیہ کہ اگر تم نے رُجوع نہیں کیا تو اِعلان کرو۔ تو اس نے اعلان نہیں کیا۔ اس کا مطلب ہے کہ اُس نے اعلان کیا، ایک دُوسرے رنگ میں، بالواسطہ، کہ ’’میں رُجوع کرچکا ہوں۔‘‘
    جناب یحییٰ بختیار: اس پر مرزا صاحب! وہ جو مرزا صاحب نے آخر میں تقریر میں، وہ جو مباحثہ ان کا تھا ’’جنگ مقدس‘‘ اس میں کہا کہ:
    ’’آج رات مجھ پر کھلا ہے وہ یہ ہے کہ جب میں نے بہت تضرّع اور اِبتہال سے 1365جنابِ الٰہی میں دُعا کی کہ تو اس امر میں فیصلہ کر اور ہم عاجز بندے ہیں تیرے فیصلے کے سوا کچھ نہیں کرسکتے۔ تو اُس نے مجھے یہ نشان بشارت کے طور پر دیا ہے کہ اس بحث میں دونوں فریقوں میں سے جو فریق عمدا جھوٹ کو اِختیار کر رہا ہے۔۔۔۔۔۔‘‘
    مرزا ناصر احمد: یہ میں نے پڑھا تھا پہلے۔
    جناب یحییٰ بختیار: ’’۔۔۔۔۔۔ اور عاجز اِنسان کو خدا بتا رہا ہے۔۔۔۔۔۔‘‘
    یعنی عیسائی عاجز بندے کو خدا سمجھتے ہیں یسوع کو، کیا آتھم نے اس کے بعد عاجز بندے کو خدا نہیں سمجھا؟
    مرزا ناصر احمد: اب یہ اس جگہ ہم پہنچ گئے کہ اِنذاری پیش گوئیاں رُجوع کے ساتھ ٹل تو جاتی ہیں، مگر سوال یہ ہے کہ اس نے رُجوع کیا یا نہیں؟
    جناب یحییٰ بختیار: ہاںجی۔
    مرزا ناصر احمد: یہی سوال ہوا ناںجی؟
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں ، میں کہتا ہوں کہ رُجوع تو آپ کہتے ہیں کہ۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: وہ میں سمجھ گیا۔
    جناب یحییٰ بختیار: یہ ایک عاجز بندے کو وہ خدا سمجھتا ہے، اس وجہ سے جھوٹا ہے وہ۔
    مرزا ناصر احمد: نہیں، یہ ویسے لمبی بحث ہے۔ میں ایک حوالہ میں پڑھ دیتا ہوں، چھوٹا سا ہے، اس سے بھی روشنی پڑتی ہے اس پر۔
    جب وہ پہلا اِنعام ایک ہزار روپے والا دِیا آپ نے، اس اِشتہار کے یہ الفاظ ہیں:
    ’’اس بات کے تصفیے کے لئے کہ فتح کس کو ہوتی، آیا اہلِ اسلام کو جیسے کہ درحقیقت ہے، یا عیسائیوں کو جیسا کہ وہ ظلم کی راہ سے خیال کرتے ہیں، تو میں ان کی پردہ دری کے لئے مباہلہ کے لئے تیار ہوں اگر دروغ گوئی اور چالاکی سے باز نہ 1366آئیں تو مباہلہ اس طور پر ہوگا کہ ایک تاریخ مقرّر ہوکر ہم فریقین ایک میدان میں حاضر ہوں اور مسٹر عبداللہ آتھم صاحب کھڑے ہوکر تین مرتبہ ان الفاظ کا اِقرار کریں کہ اس پیش گوئی کے عرصہ میں… اسلامی رُعب ایک طرفۃالعین کے لئے بھی میرے دِل پر نہیں آیا اور میں اِسلام اور نبیٔ اسلامa کو ناحق پر سمجھتا رہا اور سمجھتا ہوں اور صداقت کا خیال تک نہیں آیا اور حضرت عیسیٰ کی ابنیت اور اُلوہیت پر یقین رکھتا رہا اور کتابوں اور اس میں یقین جو فرقہ پراٹسٹنٹ کے عیسائی رکھتے ہیں اور اگر میں نے خلافِ واقعہ کیا ہے (یہ جو اُوپر کے الفاظ ہیں) اور حقیقت کو چھپایا ہے تو اے خدائے قادر مجھ پر ایک برس میں عذاب موت نازل کر۔ اس دُعا پر ہم آمین کہیں گے اور اگر دُعا کا ایک سال تک اثر نہ ہوا اور وہ عذاب نازل نہ ہوا جو جھوٹوں پر نازل ہوتا ہے تو ہم ہزار روپیہ مسٹر عبداللہ آتھم صاحب کو بطور تاوان کے دیں گے۔‘‘
    یہ پہلا اِشتہار ہے۔ اب اس میں آپ نے بتایا ہے کہ رُجوع سے کیا مراد ہے جو اُس نے کیا، اور اگر وہ اِنکار کرے تو کس رُجوع کے نہ کرنے کا وہ اقرار کرے اور یہ، وہ یہ ہیں، وہی جو آپ کہہ رہے تھے ناں، عیسائیت:
    ’’اور وہ یہ اقرار کرے کہ اسلام کا رُعب میرے اُوپر نہیں پڑا اور میں اسلام اور نبیٔ اسلامa کو ناحق پر سمجھتا رہا اور سمجھتا ہوں اور صداقت کا خیال تک نہیں آیا اور حضرت عیسیٰ کی ابنیت اور اُلوہیت پر یقین رکھتا رہا اور رکھتا ہوں۔‘‘
    تو یہ ہے رُجوع۔ اس سے وہ اِنکار کر رہا تھا اور یہ وہی الفاظ ہیں جس کا آپ نے ذِکر کیا۔
    جناب یحییٰ بختیار: وہ میں سمجھ گیا کہ یہ تو پھر چیلنج کے بعد چیلنج اور اگر وہ بھی نہ منظور ہوتے تو کہتے ’’پھر میں اور دیتا ہوں۔‘‘ آپ یہ ۔۔۔۔۔۔ پہلے انہوں نے صرف یہ کہا کہ: ’’عیسائی عاجز بندے کو انسان مانتا ہے‘‘ یہ چیلنج دیا اس کو، وہ چیلنج غلط ثابت ہوا۔
    1367مرزا ناصر احمد: نہیں، نہیں۔
  7. ‏ جنوری 16, 2015 #17
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (مرزا قادیانی کا چیلنج پر چیلنج)
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔ اور اس کے بعد اس کو کہا کہ جی ۔۔۔۔۔۔ ابھی Explanation (وضاحت) یہ کہ: ’’ابھی آپ کو ابھی ایک اور چیلنج ہے مجھ سے۔ پھر ایک سال کا ٹائم دیتا ہوں۔‘‘ اس پر بھی وہ نہ مرے، تو کہتے ہیں: ’’ایک اور چیلنج لے‘‘ یہ تو پھر بعد کی باتیں ہوجاتی ہیں۔
    مرزا ناصر احمد: یہ اِشتہار ایک ایک سال کے بعد نہیں آئے۔ یہ آپ کو کسی نے غلط بتایا ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، اِشتہار میں ان کو ایک سال کا اور ٹائم دیا کہ: ’’اگر ایک سال کے اندر اگر یہ قسم اُٹھائے، نہ مرے تو میں اس کو ایک ہزار روپے دُوں گا۔‘‘
    مرزا ناصر احمد: انسان جو اللہ تعالیٰ کا عاجز بندہ ہے، خود قدرت اپنے ہاتھ میں لے کے اِعلان نہیں کرتا جب تک اللہ تعالیٰ نہ بتائے۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں جی، اللہ تعالیٰ نے اس کو کہا کہ پندرہ مہینوں کے اندر مرے گا اور ضرور مرے گا یہ۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: اور پھر وہ۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔۔ ذلیل وخوار ہوگا۔ پھر ہوا نہیں، وہ مرا نہیں۔
    مرزا ناصرا حمد: بہرحال، ہم سمجھتے ہیں، اس سارے کو دیکھ کے ہم یہ سمجھتے ہیں کہ جو شخص ساری اس تفصیل میں سے گزرے، ہم سمجھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ غلط سمجھتے ہوں گے۔۔۔۔۔۔ ہم یہ سمجھتے ہیں کہ جو شخص اس ساری تفصیل میں سے گزرے وہ وہی نتیجہ نکالے گا جو ہم نے نکالا۔
  8. ‏ جنوری 16, 2015 #18
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (مرزا قادیانی کا ڈوئی امریکن کو چیلنج)
    جناب یحییٰ بختیار: ٹھیک ہے۔
    مرزا صاحب! ایک اور اس پر سوال آجاتا ہے۔ ایک امریکن تھے جنہوں نے بھی کوئی دعویٰ کیا تھا ___ تاکہ میں دونوں Pictures (تصویریں) لانا چاہتا ہوں۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: نہیں یہ وہ اس کے ساتھ نہیں تعلق۔
    1368جناب یحییٰ بختیار: نہیں، نہیں، علیحدہ تھا… میں نے پڑھا ہوا ہے اس پر… جو واقعی مرگیا تھا کہ جو عرصہ مرزا صاحب نے کہا تھا کہ یہ خوار ہوگا۔ وہ جو وہاں زورن شہر میں تھا۔ اس نے کہا کہ اسلام ختم ہوجائے گا۔ امریکن اخبار میں اس کا ذِکر آیا۔ پھر وہ "True Islam" (سچا اسلام) میں بڑی Detail (تفصیل) سے سارے وہ دئیے گئے ہیں، ڈیوی تھا یا ڈوئی۔
    مرزا ناصر احمد: ڈوئی۔
    جناب یحییٰ بختیار: تو ان کو بھی مرزا صاحب نے ایسا ہی چیلنج دیا تھا؟
    مرزا ناصرا حمد: یہ میں ۔۔۔۔۔۔ ڈوئی کے متعلق پہلے ذِکر یہ ہمارا ریکارڈ میں آچکا ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاںجی، وہ کتاب میں میں نے تفصیل سے پڑھا ہے۔
    مرزا ناصر احمد: کسی سلسلے میں ڈوئی کا ذِکر ریکارڈ میں ہے۔
  9. ‏ جنوری 16, 2015 #19
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (ڈوئی نے مرزاقادیانی کے چیلنج کو قبول نہیں کیا)
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں آچکا ہے۔ ہاں، میں کہتا ہوں کہ وہ بھی چیلنج مرزا صاحب نے ان کو یہی دیا کہ یہ کچھ عرصے کے اندر ۔۔۔۔۔۔ کچھ ٹائم دیا تھا، ایک سال، آٹھ مہینے، دوسال مجھے یاد نہیں ۔۔۔۔۔۔ کہ یہ ذلیل ہوگا اور مرے گا اور وہ جو میں نے دیکھی کتاب "True Islam" (سچا اسلام) اس میں یہ ہے کہ وہ ذلیل بھی ہوا اور مرا بھی، مگر اس نے کسی اسٹیج پر چیلنج کو Accept (قبول) ہی نہیں تھا کیا۔
    مرزا ناصر احمد: اس نے کیا ہے Accept (قبول)۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، آپ کے اخبار یہ کہہ رہے ہیں کہ: He ignored it (اس نے اسے نظرانداز کیا)، اس پر تو آپ کہتے ہیں کہ پیش گوئی ٹھیک آگئی باوجود اس کے کہ اس نے Accept (قبول) نہیں کیا۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: نہیں، نہیں، اوہو! یہ میں سمجھ گیا۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔ اور ثناء اللہ کے بارے میں کہتے ہیں Accept (قبول) نہیں کیا، اس واسطے۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: یہ میں سمجھ گیا، آپ کا پوائنٹ میں سمجھ گیا ہوں۔ میں جواب دیتا ہوں۔ ایک پہلے پیش گوئی ہے، ایک ہے مباہلہ۔ ان دو میں فرق ہے۔ اس کے متعلق پیش گوئی تھی، مباہلہ نہیں تھا۔
    1369جناب یحییٰ بختیار: نہیں جی، اس میں یہ چیلنج تھا کہ اس نے اس کو Accept (قبول)…
    مرزا ناصر احمد: نہ، نہ، نہ، چیلنج پیش گوئی کے رنگ میں اور یہاں مباہلہ کے رنگ میں۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، پیش گوئی آتھم کا میں نے پوچھا۔ آپ نے کہا آتھم نے Accept کیا تھا اس کو۔
    مرزا ناصر احمد: وہ مباہلہ تھا، آتھم کے ساتھ مباہلہ تھا، اور یہ بعد میں بھی مباہلہ کا لفظ آیا ہے سارے اس سلسلے میں اس میں کوئی شک نہیں کہ مباہلہ جو ہے، آتھم کے ساتھ مباہلہ تھا۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: اس میں بھی پیش گوئی آتی ہے۔
    مرزا ناصر احمد: اور ڈوئی کے ساتھ پیشین گوئی تھی اور ان دو میں فرق ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: ثناء اللہ اور آتھم کے ساتھ پیشین گوئی نہیں تھی؟
    مرزا ناصر احمد: آتھم کے ساتھ مباہلہ تھا اور وہ مباہلہ ہوا۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں، اور مباہلہ میں پیشین گوئی تھی۔
    مرزا ناصر احمد: ۔۔۔۔۔۔ اور حضرت مولانا ثناء اللہ صاحب کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔ مباہلہ کا چیلنج دیا گیا اور ایک دُعا کی شکل میں بتایا کہ یہ مباہلہ میں کرنا چاہتا ہوں اور انہوں نے اِنکار کیا یہ کہہ کے کہ ’’کوئی دانا انسان آپ کے اس چیلنج کو قبول نہیں کرسکتا۔‘‘
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، وہ تو ٹھیک ہے، پھر آتھم کے بارے میں یہ مباہلہ میں پیشین گوئی کی انہوں نے؟
    مرزا ناصر احمد: ایک پیشین گوئی کا رنگ مباہلہ میں بھی ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہے پیشین گوئی، مگر مباہلہ میں ہوئی؟
    مرزا ناصر احمد: مباہلہ کی شکل میں ہے۔ ان دونوں کی شکلیں مختلف ہیں۔
    جناب یحییٰ بختیار: ان کو بھی اسی طرح چیلنج کیا، ڈیوی کو یا ڈوئی کو؟
    1370مرزا ناصر احمد: ڈوئی کو چیلنج نہیں کیا، ڈوئی کو کہا کہ ’’تم اس جگہ پر پہنچے ہوئے ہو کہ میں تمہیں بتاتا ہوں کہ اللہ تعالیٰ کے عذاب کے نیچے آؤگے، بغیر مباہلہ کے۔‘‘
    جناب یحییٰ بختیار: مرزا صاحب! نہیں، میں آپ کو کتاب بتادُوں کہ اس کو Approach (رابطہ) کیا گیا کہ: ’’یہ کہتے ہیں، آپ کے بارے میں، انڈیا میں Prophet Ahmad یہ چیلنج دے رہے ہیں آپ کو۔ آپ Accept (قبول) کررہے ہیں اس کو؟‘‘ اس نے کہا کہ: ’’نہیں، I ignore it، (میں اس کو نظرانداز کرتا ہوں) ایسے کیڑے مکوڑے بہت پھرتے رہتے ہیں۔‘‘ A very contemptuous language he used. (اس نے ہتک آمیز الفاظ اِستعمال کئے)
    مرزا ناصر احمد: میرے علم میں کہیں مباہلہ نہیں۔
    جناب یحییٰ بختیار: مباہلہ نہیں، میں نے کہا اس کو چیلنج کیا، اس کو کہا کہ Accept (قبول) کرو، اس نے انکار کردیا۔
    مرزا ناصر احمد: دیکھیں ناں، چیلنج دیا۔ Stage by stage (مرحلہ وار) چلتے ہیں۔ چیلنج دیا، اس نے قبول نہیں کیا۔ مباہلہ کا سوال ہی نہیں پیدا ہوتا۔ لیکن اِنکار کرنے میں اس نے پھر گندہ دہنی سے کام لیا۔ تب مباہلہ کے بغیر اس کے متعلق پیش گوئی کی گئی۔ یہ تیسری اسٹیج ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: وہ میں کتاب لے آؤں گا۔
    مرزا ناصر احمد: ہاں، ہاں۔ ابھی اور چلنا ہے؟
  10. ‏ جنوری 16, 2015 #20
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (مرزا قادیانی کی پیش گوئی پوری نہ ہونے پر مریدین کو تشویش)
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، اس میں ایک سوال ابھی اور کرنا ہے ۔۔۔۔۔۔ مولوی صاحب نے مجھے کہا کہ آپ کی توجہ دلاؤں۔ I don't want to waste your time. (میں آپ کا وقت ضائع نہیں کرنا چاہتا) صرف یہ ہے کہ:
    ’’اس پیشین گوئی کے بعد مرزا صاحب کے بھی کئی ایسے مرید تھے جن کو بڑی تشویش ہوئی اور پریشانی ہوئی کہ یہ کیوں پیشین گوئی پوری نہیں آتی۔ اس میں سے ایک صاحب ہیں ملیرکوٹلہ کے ایک رئیس جو محمد علی خان۔۔۔۔۔۔‘‘
    1371مرزا ناصر احمد: رئیس؟ میں نام نہیں سن سکا۔
    جناب یحییٰ بختیار: ’’۔۔۔۔۔۔ محمد علی خان، جو مرزا صاحب کے خادم اور سچّے خادم ہیں، انہوں نے اپنی پریشانی پیشین گوئی کے عدم وقوع کا رونا اپنے دو خطوں میں ظاہر کیا ہے۔‘‘
    تو یہ دو خط یہاں ہیں۔ ان میں وہ کہتے ہیں:
    ’’آپ کی پیشین گوئی آپ کی تشریح کے موافق پوری ہوگئی؟ نہیں، ہرگز نہیں۔ عبداللہ آتھم اب تک صحیح وسالم موجود ہے۔ اس کو بہ سزائے موت ہاویہ میں نہیں گرایا گیا۔ اگر یہ صحیح ہوتا تو یہ سمجھو کہ پیش گوئی اِلہام کے الفاظ کے بموجب پوری ہوگئی۔ جیسا کہ مرزا خدابخش صاحب نے لکھا ہے اور ظاہری معنی جو یہ سمجھے گئے تھے وہ ٹھیک نہ تھے۔ اوّل تو کوئی ایسی بات نظر نہیں آتی کہ جس کا اثر عبداللہ آتھم صاحب پر پڑا ہو۔‘‘
    دُوسرے پیش گوئی کے الفاظ یہ ہیں:
    ’’اب بحث میں دونوں فریقوں میں سے جو فریق عمداً جھوٹ کو اِختیار کر رہا ہے اور سچّے خدا کو چھوڑ رہا ہے اور عاجز اِنسان کو خدا بنا رہا ہے وہ ان ہی دنوں مباحثہ کے لحاظ سے یعنی فی دن ایک مہینہ لے کر یعنی پندرہ ماہ تک ہاویہ میں گرایا جائے گا اور اس کو سخت ذِلت پہنچے گی۔‘‘
    یہ خط وہ۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: ٹھیک۔
لڑی کی کیفیت :
مزید جوابات کے لیے دستیاب نہیں

اس صفحے کی تشہیر