1. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  2. ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ

    تحفظ ناموس رسالتﷺ و ختم نبوت پر دنیا کی مایہ ناز کتب پرٹائپنگ ، سکینگ ، پیسٹنگ کا کام جاری ہے۔آپ بھی اس علمی کام میں حصہ لیں

    ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ
  3. ہمارا وٹس ایپ نمبر whatsapp no +923247448814
  4. [IMG]
  5. ختم نبوت فورم کا اولین مقصد امہ مسلم میں قادیانیت کے بارے بیداری شعور کرنا ہے ۔ اسی مقصد کے حصول کے لیے فورم پر علمی و تحقیقی پراجیکٹس پر کام جاری ہے جس میں ہمیں آپ کے علمی تعاون کی اشد ضرورت ہے ۔ آئیے آپ بھی علمی خدمت میں اپنا حصہ ڈالیں ۔ قادیانی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد قادیانی کتب پراجیکٹ مرزا غلام قادیانی کی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ تمام پراجیکٹس پر کام کرنے کی ٹرینگ یہاں سے لیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ کا طریق کار

(مسیلمہ کذاب کی کیا پوزیشن تھی؟)

محمدابوبکرصدیق نے '1974ء قومی اسمبلی کی مکمل کاروائی' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ فروری 7, 2015

  1. ‏ فروری 7, 2015 #1
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (مسیلمہ کذاب کی کیا پوزیشن تھی؟)
    جناب یحییٰ بختیار: مسیلمہ کذاب کی کیا پوزیشن تھی؟
    جناب عبدالمنان عمر: ہاں جی، مسیلمہ کذاب۱؎…
    جناب یحییٰ بختیار: وہ کلمہ پڑھتا تھا اور نبوّت کا دعویٰ بھی کیا کرتا تھا۔
    جناب عبدالمنان عمر: جی نہیں، میں عرض کرتا ہوں،مسیلمہ کذاب کی ۔۔۔۔۔۔۔ مسیلمہ کذاب کی پوزیشن جنابِ والا! یہ تھی کہ اُس نے نبی کریمﷺ کے زمانے میں کسی دِین کے لئے نہیں، کسی وجہ سے نہیں، ایک سیاسی غرض سے کلیۃً سیاسی 1559غرض سے قبول کیا اور آکے یہ کہا کہ: ’’جناب! میں آپ کو مان لیتا ہوں، آدھا ملک آپ بانٹ لیجئے، آدھے پر میری حکمرانی تسلیم کرلیجئے۔‘‘ آپ نے فرمایا کہ یہ تو بات ہی غلط ہے، یہ تو کوئی سیاسی بات تھی نہیں۔ اس کے بعد اُس نے حضرت ابوبکر صدیقؓ کے زمانے میں Revolt (بغاوت) کیا ہے اسلامی حکومت کے خلاف۔ وہ صرف ایک عقیدے کی بات نہیں ہے۔ جو اِبتدا میں اس کا تخیل تھا کہ میں قبضہ کرلوں کسی ملک کے حصے پر، وہ اُس کے لئے اُس نے Revolt (بغاوت) کیا، جس پر حضرت ابوبکرؓ کو اِسلامی فوجیں بھیجنی پڑی ہیں اُس کے خلاف۔
    جناب یحییٰ بختیار: اُس کو کافر قرار دِیا گیا؟
    جناب عبدالمنان عمر: نہ، نہ،۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: کافر قرار دِیا گیا کلمہ گو کو؟
    جناب عبدالمنان عمر: میں عرض کرتا ہوں یہ حملہ اُس کو کافر قرار دینے کی وجہ سے نہیں ہوا ہے، یہ حملہ اُس کے اُس Revolt (بغاوت) کی وجہ سے ہوا۔۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، وہ میں سمجھ گیا ہوں، مگر یہ میں پوچھتا ہوں کہ اُس کو کافر قرار دِیا گیا تھا؟ جھوٹا قرار دِیا گیا تھا؟
    جناب عبدالمنان عمر: جی، ’’کذاب‘‘ اُس کا نام ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں، تو یہی میں نے کہا ہے کہ کذاب، Lier جھوٹا۔
    جناب عبدالمنان عمر: ہیںجی؟
    جناب یحییٰ بختیار: ’’کذاب‘‘ mean، اس کا مطلب ہی ’’جھوٹا‘‘ ہوتا ہے۔
    جناب عبدالمنان عمر: جی آ، کذاب۔
    جناب یحییٰ بختیار: تو اُس شخص نے کلمہ کہنے کے باوجود۔۔۔۔۔۔
    ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

    ۱؎ اس کی بھی بولو رام ہوگئی۔
    ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    جناب عبدالمنان عمر: جی۔
    1560جناب یحییٰ بختیار: دِل کا حال تو اللہ جانتا ہے۔ آپ نے خود یہ کہا کہ حضرت عمرؓ نے کہا کہ ایسے لوگوں کے لئے بھی جگہ ہے اسلام میں کہ دِل سے مسلمان نہ ہوں، سیاسی وجوہ کی بنا پر وہ مسلمان بن جائیں، ان کے لئے بھی گنجائش ہے۔
    جناب عبدالمنان عمر: بالکل، یہ حضرت عمرؓ کا میں نے قول پیش کیا۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں۔ تو اس لئے مسیلمہ کذاب تو پھر مسلمان ہی رہا، اُس کو کیوں جھوٹا قرار دے رہے ہیں آپ؟
    جناب عبدالمنان عمر: جھوٹا ہونے اور کافر ہونے میں تو بڑا فرق ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: کافر نہیں ہوا تھا وہ؟
    جناب عبدالمنان عمر: ہاںجی۱؎۔
    جناب یحییٰ بختیار: کافر نہیں سمجھا گیا اُسے؟
    جناب عبدالمنان عمر: جھوٹا تو ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں جی، کافر نہیں سمجھا گیا وہ؟
    جناب عبدالمنان عمر: جی۔
    جناب یحییٰ بختیار: مسیلمہ کذاب مسلمانوں کی نظر میں کافر ہے یا نہیں ہے؟
    جناب عبدالمنان عمر: میرا خیال ہے کہ میں شاید اپنا خیال واضح نہیں کرسکا۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، میں۔۔۔۔۔۔
    جناب عبدالمنان عمر: ۔۔۔۔۔۔ میری گزارش یہ ہے۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: اس کا آپ جواب دے لیں۔
    جناب عبدالمنان عمر: ۔۔۔۔۔۔ کہ مسیلمہ کذاب کا دعویٰ جو ہے ناں، اس کا دعویٰ یہ نہیں ہے جو بیان کیا جارہا ہے۔ اُس کا دعویٰ یہ ہے کہ میں ایک تشریعی نبوّت لے کے آیا ہوں۔ قرآن حکیم کا حکم۔۔۔۔۔۔
    1561جناب یحییٰ بختیار: وہ دُوسری بات ہوجاتی ہے۔ دیکھیں ناں، مولانا! آپ اب تشریعی اور غیرتشریعی میں چلے گئے۔
    ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

    ۱؎ مسیلمہ کذاب کافر نہیں۔۔۔!
    ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    جناب عبدالمنان عمر: جی نہیں، میں مسیلمہ کذاب کی پوزیشن کو واضح کر رہا ہوں۔
    جناب یحییٰ بختیار: میں کہتا ہوں وہ کلمہ گو تھا۔ اُس کے بعد اُس نے نبوّت کا دعویٰ کیا۔ یہ اور بات ہے کہ کس کیٹگری کی نبوّت تھی اُس کی۔۔۔۔۔۔۔
    جناب عبدالمنان عمر: کیٹگری تھی نہیں اُس کی۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، یہ میں کہہ رہا ہوں ناں، اُس نے نبوّت کا دعویٰ کیا۔۔۔۔۔۔
    جناب عبدالمنان عمر: جی۔
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔۔اور وہ کلمہ گو تھا۔۔۔۔۔۔
    جناب عبدالمنان عمر: جی۔
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔ کہتا تھا منہ سے۔۔۔۔۔۔
    جناب عبدالمنان عمر: جی۔
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔ کہ میں کلمہ گو ہوں۔
    جناب عبدالمنان عمر: جی۔
    جناب یحییٰ بختیار: تو اُمتی ہوگیا وہ۔
    جناب عبدالمنان عمر: جی۔
    جناب یحییٰ بختیار: اور نبوّت کا دعویٰ کیا۔ کیا مسلمان اُس کو کافر سمجھتے ہیں یا نہیں سمجھتے؟
    جناب عبدالمنان عمر: میری گزارش سنیں۔ (وقفہ)
    1562میں نے عرض کیا تھا کہ کلمہ کی حقیقت کو، لا اِلٰہ اِلَّا اللہ محمد رسول اﷲ کی حقیقت کو سمجھنے والا، کوئی کلمہ گو نبوّت کا دعویٰ کر نہیں سکتا۔ یہ اِجتماعِ نقیضین ہے۔ اُمتی بھی ہو اور نبوّت کا دعویٰ بھی کرے، یہ دونوں باتیں اکٹھی نہیں ہوسکتیں، پہلی میری ایک یہ گزارش تھی۔ پھر میں نے بتایا تھا، مرزا صاحب کا یہ حوالہ دیا تھا کہ: ’’کیا ایسا بدبخت مفتری جو خود رِسالت اور نبوّت کا دعویٰ کرتا ہے، قرآن شریف پر اِیمان رکھ سکتا ہے۔‘‘ نہیں رکھ سکتا ہے ایسا شخص۔
    ’’اور کیا ایسا شخص جو قرآن شریف پر اِیمان رکھتا ہے اور آیت: ولٰکن رسول اﷲ وخاتم النّبیّٖن کو خدا کا کلام یقین رکھتا ہے کیا وہ کہہ سکتا ہے کہ میں بھی آنحضرتﷺ کے بعد رسول اور نبی ہوں۔‘‘
    اس سے ہمارا نقطئہ نگاہ ظاہر ہوتا ہے کہ ہم لوگ نبوّت کی کوئی کیٹگریز نہیں مانتے ہیں کہ جی اس قسم کی نبوّت ہوجائے تو ٹھیک ہے، اور اس قسم کی ہوجائے تو نہیں ٹھیک ہے۔ ہم مطلقاً کسی قسم کی نبوّت، تشریعی، غیرتشریعی، اُمتی، بروزی، ظلّی، یہ ہمارے لئے کوئی نبوّت کی اقسام نہیں ہیں۔ اس لئے ہم مسیلمہ کذاب کے بارے میں یہ نہیں کہتے ہیں۔ ہمارے نزدیک وہ شخص، اُس کا دعویٰ جو ہے وہ یہ ہے کہ اُس نے آنحضرتﷺ کے بالمقابل حقیقی نبوّت کا دعویٰ کیا ہے، اور شراب اور زِنا کو حلال قرار دِیا ہے، اور فریضہ نماز تک کو ساقط کردیا ہے، قرآن مجید کے مقابلے میں سورتیں لکھی ہیں اور اس طرح کچھ مفسد لوگوں ۔۔۔۔۔۔ گروہ اپنے تابع کرلیا ہے، تو اس لحاظ سے وہ شخص اس لئے کافر ہوتا ہے جس کے لئے میں نے آپ کو وہ لفظ بولے تھے کہ ہم مدعیٔ نبوّت کو کافر وکاذب جانتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔
    1563جناب یحییٰ بختیار: مولانا۔۔۔۔۔!
    جناب عبدالمنان عمر: ۔۔۔۔۔۔ کیونکہ وہ مدعیٔ نبوّت ہے اس لئے ہم اُس کو کافر وکاذب جانتے ہیں۔

اس صفحے کی تشہیر