1. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  2. ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ

    تحفظ ناموس رسالتﷺ و ختم نبوت پر دنیا کی مایہ ناز کتب پرٹائپنگ ، سکینگ ، پیسٹنگ کا کام جاری ہے۔آپ بھی اس علمی کام میں حصہ لیں

    ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ
  3. ہمارا وٹس ایپ نمبر whatsapp no +923247448814
  4. [IMG]
  5. ختم نبوت فورم کا اولین مقصد امہ مسلم میں قادیانیت کے بارے بیداری شعور کرنا ہے ۔ اسی مقصد کے حصول کے لیے فورم پر علمی و تحقیقی پراجیکٹس پر کام جاری ہے جس میں ہمیں آپ کے علمی تعاون کی اشد ضرورت ہے ۔ آئیے آپ بھی علمی خدمت میں اپنا حصہ ڈالیں ۔ قادیانی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد قادیانی کتب پراجیکٹ مرزا غلام قادیانی کی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ تمام پراجیکٹس پر کام کرنے کی ٹرینگ یہاں سے لیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ کا طریق کار

(مرزا قادیانی کا اپنے بیٹے کو عاق کرنا)

محمدابوبکرصدیق نے '1974ء قومی اسمبلی کی مکمل کاروائی' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ جنوری 16, 2015

  1. ‏ جنوری 16, 2015 #1
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (مرزا قادیانی کا اپنے بیٹے کو عاق کرنا)
    جناب یحییٰ بختیار: مرزا سلطان احمد نے مخالفت کی اور مرزا صاحب نے ان کو عاق کردیا، Disown کردیا اور یہاں تک کہ ان کی والدہ کو بھی کہا کہ جس دن محمدی بیگم کی شادی کسی اور سے ہوئی تمہیں بھی طلاق ۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ ان کی رشتہ داری تھی احمد بیگ سے۔
    مرزا ناصر احمد: میں سن رہا ہوں۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاںجی۔ اس طرح مرزا صاحب کے دُوسرے بیٹے فضل احمد، ان کو بھی کہا کہ تم اپنی بیوی کو طلاق کردو کیونکہ وہ احمد بیگ کی Niece تھی۔
    مرزا ناصر احمد: میں نے سن لیا ہے۔ ابھی میرے جواب کی باری نہیں آئی۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، میں یہ کہتا ہوں کہ یہ حقائق۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: ہاں، میں نے کہا کہ نوٹ کریں۔
    جناب یحییٰ بختیار: ٹھیک ہے۔
    مرزا ناصر احمد: وہ تو ٹھیک ہے، ہر چیز کی وضاحت ہونی چاہئے۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں۔ یہ ان کو بھی کہا اور ان کو بھی Disown کیا، Disinherit (عاق) کیا، کیونکہ وہ اپنی بیوی کو شاید طلاق نہیں دے رہے تھے مرزا صاحب کی پیشین گوئی کو پورا کرنے کے لئے۔
    اس کے بعد محمدی بیگم کی شادی سلطان احمد سے ہوئی۔ اس کے بعد مرزا صاحب نے کہا کہ: ’’یہ میری اُمید کا معاملہ نہیں، یہ میرے Faith (ایمان) کا معاملہ ہے کہ یہ پیشین گوئی ہوکے رہے گی، شادی کے بعد بھی۔‘‘ چھ مہینے کی شادی کے بعد احمد بیگ وفات کرگئے اور ڈھائی سال کے بعد ان کے میاں نے وفات کرنا تھا۔ تو پہلے تو میاں کو مرنا چاہئے تھا پھر احمد بیگ کو۔ بہرحال، احمد بیگ پہلے وفات کرگئے۔
    1381مرزا ناصر احمد: یہ کس کو خبر ملی تھی اللہ تعالیٰ کی طرف سے کہ کس کو پہلے مرنا چاہئے تھا۱؎؟
    جناب یحییٰ بختیار: مرزا صاحب! میں نہیں کہتا یہ، میں تو صرف Inference یہ لے رہا ہوں کہ اگر میں کہوں کہ: ’’یہ شخص دو سال کے اندر مرے گا، وہ تین سال کے اندر مرے گا‘‘ تو دو سال والا مطلب ہے کہ پہلے مرے گا۔ اس واسطے۔ خاوند کے لئے کہا تھا ڈھائی سال، باپ کے لئے تین سال۔۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: اگر یہ ہو کہ زید تین سال بعد مرے گا اور بکر ڈھائی سال بعد مرے گا، اور زید مرجائے ۔۔۔۔۔۔نہ۔۔۔۔۔۔ تین سال کے اندر مرجائے گا، اور وہ ڈھائی سال کے اندر مرے گا اور زید مرجائے چھ مہینے بعد اور وہ مرے سال بعد، تو دونوں باتیں دُرست ہوں گی۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، وہ ٹھیک ہے،۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: ۔۔۔۔۔۔ اور نقشہ بدل جائے گا۲؎۔
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

    ۱؎ یہ خبر مرزاقادیانی کو ملی کہ احمد بیگ تین سال میں اور سلطان احمد خاوند محمدی بیگم کا ڈھائی سال میں مرے گا۔ تو اڑھائی سال والے کو پہلے مرنا چاہئے، تین سال والے کو بعد میں۔ سیدھی سی بات پر مرزا ناصر سیخ پا ہوگئے۔۔۔!
    ۲؎ اس پیش گوئی کا ذِکر آتے ہی ہر قادیانی کے چہرے اور دِماغ دونوں کا نقش بدل جاتا ہے۔ نقش ونگار دونوں مرزاقادیانی کی آنکھوں جیسے ہو جاتے ہیں۔

    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، وہ ٹھیک ہے، میں یہ کہہ رہا ہوں کہ پہلے مرنا چاہئے تھا، وہ مرا نہیں۔ محمدی بیگم کے جو خاوند تھے سلطان احمد، یہ بڑا کوئی سخت قسم کا آدمی تھا، تو یہ نہیں مرا اور اس کے بعد ڈھائی سال کا عرصہ بھی گزرگیا اور پھر یہ گیا، بڑا سولجر رہا فرانس میں۔ ان کو کئی دفعہ گولیاں بھی لگیں لڑائی میں، ۱۹۱۴ء کی جنگ میں، پھر بھی نہیں مرا وہ، اور نتیجہ یہ ہوا کہ مرزا صاحب کا محمدی بیگم سے کبھی نکاح نہیں ہوا، کبھی شادی نہیں ہوئی۔ تو یہ Facts (حقائق)۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: یہ اِنذاری پیشین گوئی تھی، ٹل گئی۔ ٹھیک ہے یہ۔ یہ وہ Facts (حقائق) ہیں جو آپ کو بتائے گئے ہیں۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں، تو میں کہتا ہوں کہ آپ Verify (تصدیق) کرلیں۔ اگر غلط ہوں۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: اور آپ مہربانی سے ہمیں یہ حکم دے رہے ہیں کہ ہم اس کو Clarify (واضح) کریں۔
    1382جناب یحییٰ بختیار: ہاں، بے شک، ٹھیک ہے۔
    مرزا ناصر احمد: یہ تو خلاصہ ہے، اس واسطے حوالوں کا سوال ہی نہیں۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، یہ تو۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: یعنی میرا مطلب ہے، خلاصہ ہے ناں یہ تو۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں، میں نے تو Sum up کیا ہے، جو مجھے Facts دئیے ہیں تو وہ میں پڑھ رہا تھا۔
    مرزا ناصر احمد: ہاں، ہاں، اسی واسطے میں نے کہا تھا بڑا اچھا قصہ ہے۱؎۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں، تاکہ اس پر آپ۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: یعنی حوالے اس نے کہیں دئیے ہی نہیں؟
    جناب یحییٰ بختیار: ہیںجی؟
    مرزا ناصر احمد: یہ جو ہے خلاصہ۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: مرزا صاحب! یہ کوئی میرے خیال میں دس بارہ کتابیں ہیں جن میں سے یہ ایک واقعہ ہے کہ ایسا ہوا۔
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

    ۱؎ مرزا کے سارے قصے اچھے تھے، تیری ہر مسے آ بدنامی نی موتی دے لونگ والئی۔
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    مرزا ناصر احمد: یہ اگر وہ دس بارہ کتابوں کے نام صرف بتادیں، صفحے بتائے بغیر، تو ہم نکال لیں گے بیچ میں سے۔
    جناب یحییٰ بختیار: تو معلوم کرلوں گا اس پر۔
    مرزا ناصر احمد: ہاں۔
    جناب یحییٰ بختیار: کچھ انہوں نے دیا تھا، کچھ اورروں نے دئیے تھے۔ مگر یہ Facts (حقائق) میں نے ان سے لئے۔
    مرزا ناصر احمد: ہاں، ٹھیک ہے، میں سمجھ گیا ہوں، میں سمجھ گیا ہوں۔
    جناب یحییٰ بختیار: اگر Facts آپ کہتے ہیں کہ کوئی غلط ہے اس میں، کہ ایسا نہیں ہوا، 1383ایسا خط نہیں لکھا گیا، یا ایسے Disown بیٹے کو نہیں کیا۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: ۔۔۔۔۔۔ یا اس کا مضمون اور ہے، یا اس کا Context اور ہے۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں، نہیں، مضمون کی بات بعد میں، میں Bare Facts کہہ رہا ہوں، میں یہ نہیں کہتا کہ Exact (بالکل) ان الفاظ میں مرزاصاحب نے بات کی۔
    مرزا ناصر احمد: نہیں، نہیں، میرا مطلب ہے اگر جنرل Impression (تأثر) اس سے Just the opposite ہو، جو سارے Facts (حقائق) ہیں۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: وہ اور بات ہے۔ دیکھیں ناں، مرزا صاحب! میں یہ عرض کر رہا ہوں…
    مرزا ناصر احمد: نہیں، میں تو جواب دُوں گا۔ میں تو ابھی جواب ہی نہیں دے رہا۔
    جناب یحییٰ بختیار: ہاں، میں نے کہا کہ میری پوزیشن Clear (واضح) ہوجائے…
    مرزا ناصر احمد: وہ Clear (واضح) ہے آپ کی۔
    جناب یحییٰ بختیار: ۔۔۔۔۔۔۔ کہ احمد بیگ کو خط لکھا۔۔۔۔۔۔
    مرزا ناصر احمد: وہ پوزیشن نوٹ کرلی ہے ساری۔
    جناب یحییٰ بختیار: … اس کے ایک عزیز کو خط لکھا، دھمکی دی…
    مرزا ناصر احمد: وہ ساری نوٹ کرلی ہیں، پتا لگے گا۱؎…
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

    ۱؎ ’’پتا لگے گا‘‘ کی تڑی نہ لگائیں، ہمیں پتا لگے نہ لگے، قادیانیوں کو تو پتا لگ چکا۔ اس لئے کہ قادیانی عقیدہ کے مطابق محمدی بیگم کا اللہ تعالیٰ نے آسمانوں پر نکاح مرزاقادیانی سے کیا، نبی کی بیوی اُمت کی ماں، تو محمدی بیگم قادیانیوں کی آسمانی ماں تھی، اس کو لے گیا سلطان پٹی والا، تو ’’پتا لگے گا‘‘ یا لگ گیا؟۔۔۔!
    ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
    جناب یحییٰ بختیار: …اپنے بیٹے کو کہا کہ تم بیوی کو طلاق دو۔ دُوسرے بیٹے کو کہا کہ تم…
    مرزا ناصر احمد: …جب میں جواب دُوں گا تو حقائق جو ہیں وہ صحیح شکل میں سامنے آجائیں گے۔
    جناب یحییٰ بختیار: …تو میں نے کہا یہ Facts (حقائق) کہ اپنی بیگم کو طلاق دے دی…
    مرزا ناصر احمد: ہاں، ہاں، وہ سارے دیکھ لیں گے۔

اس صفحے کی تشہیر