1. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  2. ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ

    تحفظ ناموس رسالتﷺ و ختم نبوت پر دنیا کی مایہ ناز کتب پرٹائپنگ ، سکینگ ، پیسٹنگ کا کام جاری ہے۔آپ بھی اس علمی کام میں حصہ لیں

    ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ
  3. ہمارا وٹس ایپ نمبر whatsapp no +923247448814
  4. [IMG]
  5. ختم نبوت فورم کا اولین مقصد امہ مسلم میں قادیانیت کے بارے بیداری شعور کرنا ہے ۔ اسی مقصد کے حصول کے لیے فورم پر علمی و تحقیقی پراجیکٹس پر کام جاری ہے جس میں ہمیں آپ کے علمی تعاون کی اشد ضرورت ہے ۔ آئیے آپ بھی علمی خدمت میں اپنا حصہ ڈالیں ۔ قادیانی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد قادیانی کتب پراجیکٹ مرزا غلام قادیانی کی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ تمام پراجیکٹس پر کام کرنے کی ٹرینگ یہاں سے لیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ کا طریق کار

(مرزا صاحب نے بیٹے کو کہا کہ تم اپنی بیوی کو طلاق دو)

محمدابوبکرصدیق نے '1974ء قومی اسمبلی کی مکمل کاروائی' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ فروری 7, 2015

  1. ‏ فروری 7, 2015 #1
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    (مرزا صاحب نے بیٹے کو کہا کہ تم اپنی بیوی کو طلاق دو)
    جناب یحییٰ بختیار: میں پھر ایک اور بات کرلوں۔ مرزا صاحب نے اس کو کہا تھا کہ ’’تم اپنی بیوی کو طلاق دو۔‘‘ مرزا صاحب نے کہا کہ: ’’میں تمہاری ماں کو بھی طلاق دیتا ہوں کیونکہ تم کوشش نہیں کرتے کہ محمدی بیگم مجھ سے شادی کرے۔‘‘ یہ دُرست ہے یہی وجہ تھی؟
    جناب عبدالمنان عمر: جناب! میں، کیونکہ محمدی بیگم کا واقعہ آگیا۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: آپ جو کہتے ہیں کہ اور وجوہات تھیں۔
    1630جناب عبدالمنان عمر: ۔۔۔۔۔۔اس لئے اب مجھے عرض کرنے کی اِجازت ہوگئی ہے۔
    مولانا شاہ احمد نورانی صدیقی: نماز کا وقت ہوگیا ہے۔
    جناب عبدالمنان عمر: پہلا یہ اِعتراض یہ فرمایا گیا ہے کہ انہوں نے کہا کہ: ’’اپنی بیٹی کو ۔۔۔۔۔۔ بیوی کو طلاق دے دو!‘‘ جناب! یہ واقعہ بالکل اِس سے ملتاجلتا ہے۔۔۔۔۔۔
    Mr. Yahya Bakhtiar: Still five minutes more......
    ابھی پانچ منٹ ہیں۔
    (جناب یحییٰ بختیار: صرف پانچ منٹ ہیں۔۔۔۔۔۔)
    محترمہ قائم مقام چیئرمین: اچھا، Five (پانچ) منٹ ہیں۔
    جناب عبدالمنان عمر: شکایت یہ کی گئی کہ انہوں نے کہا کہ: ’’اپنی بیوی کو طلاق دے دو!‘‘ یہ گھریلو معاملات ہوتے ہیں۔ ایک باپ زیادہ صحیح سمجھتا ہے کہ میری بہو جو ہے کن اوصاف کی مالک ہونی چاہئے۔ اُس کو اِتنا حق ضرور ملنا چاہئے۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں میں اِس تفصیل میں نہیں جانا چاہتا۔ یہی وجہ تھی یا اور کوئی وجہ تھی؟
    جناب عبدالمنان عمر: نہیں، نہیں، یہ وجہ نہیں تھی۔
    جناب یحییٰ بختیار: پھر اِس کو چھوڑ دیجئے۔ جو وجہ ہے وہ بتائیے آپ؟
    جناب عبدالمنان عمر: میں عرض یہ کر رہا تھا کہ پٹی کا ایک خاندان تھا جو ان کا دُور کا رشتہ دار بھی تھا، مرزا صاحب کا۔ اِن لوگوں کی اخلاقی، دِینی اور مذہبی حالت بہت ہی بُری تھی، مرزا صاحب کی نظر میں۔ اِس لئے مرزا صاحب نے کوشش کی کہ اُن لوگوں کو، جس طرح کہ وہ باہر کے لوگوں کو دِین دار بنانے کی کوشش کرتے تھے، اِس لئے انہوں نے یہ کوشش کی کہ اُس خاندان میں بھی مذہب کو، اِسلام کو، نبی کریمﷺکو روشناس کرائیں۔ لیکن وہ لوگ قریب دہریت کے پہنچ گئے تھے اور وہ اِس قسم کی وعظ ونصیحت سے۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: یہ وہ محمدی بیگم کے خاندان کی بات کر رہے ہیں یا کوئی اور ہے؟
    1631جناب عبدالمنان عمر: جی ہاں۔
    جناب یحییٰ بختیار: وہی Indirectly کہتے ہیں، یہ گھریلو معاملے پھر لے آتے ہیں آپ۔ مرزا احمد بیگ کا ذِکر کر رہے ہیں آپ؟
    جناب عبدالمنان عمر: میں عرض کر رہا تھا کہ آپ نے پوچھا کہ محمدی بیگم۔۔۔۔۔۔
    جناب یحییٰ بختیار: نہیں، یہ مرزا احمد بیگ کا ذِکر رہے ہیں آپ۔۔۔۔۔۔؟
    جناب عبدالمنان عمر: جی ہاں۔
    جناب یحییٰ بختیار: بات وہی ہوگی جو میں کہتا ہوں تو کہتے ہیں: ’’نہیں، یہ نہیں ہے، یہ گھریلو معاملہ ہے۔‘‘
    جناب عبدالمنان عمر: نہیں، میں نے تو عرض کیا کہ وہی بات ہے۔

اس صفحے کی تشہیر