1. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  2. ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ

    تحفظ ناموس رسالتﷺ و ختم نبوت پر دنیا کی مایہ ناز کتب پرٹائپنگ ، سکینگ ، پیسٹنگ کا کام جاری ہے۔آپ بھی اس علمی کام میں حصہ لیں

    ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ
  3. ہمارا وٹس ایپ نمبر whatsapp no +923247448814
  4. [IMG]
  5. ختم نبوت فورم کا اولین مقصد امہ مسلم میں قادیانیت کے بارے بیداری شعور کرنا ہے ۔ اسی مقصد کے حصول کے لیے فورم پر علمی و تحقیقی پراجیکٹس پر کام جاری ہے جس میں ہمیں آپ کے علمی تعاون کی اشد ضرورت ہے ۔ آئیے آپ بھی علمی خدمت میں اپنا حصہ ڈالیں ۔ قادیانی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد قادیانی کتب پراجیکٹ مرزا غلام قادیانی کی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ تمام پراجیکٹس پر کام کرنے کی ٹرینگ یہاں سے لیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ کا طریق کار

لاہوریوں کو دھوکہ اور ان کی قابلیت

محمدابوبکرصدیق نے '1974ء قومی اسمبلی کی مکمل کاروائی' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ مارچ 15, 2015

  1. ‏ مارچ 15, 2015 #1
    محمدابوبکرصدیق

    محمدابوبکرصدیق ناظم پراجیکٹ ممبر

    لاہوریوں کو دھوکہ اور ان کی قابلیت
    ۱… لاہوری بے چارے مرزاغلام احمد کو کیا سمجھیں، جس شخص کو سرور عالم ﷺ کذاب ودجال فرمائیں یہ سادہ تبلیغ، تبلیغ کا شور مچانے والے ان پر اس کو کہاں تک پرکھ سکتے ہیں۔
    ان کی علمی قابلیت کے لئے دو ہی باتوں کا بیان ضروری ہے۔ ایک تو یہ کہ جب لاہوری مرزائی اپنا مطبوعہ بیان خصوصی کمیٹی (قومی اسمبلی) کے سامنے پڑھ چکے تو میں نے توجہ دلائی کہ فلاں صفحہ کی سطر فلاںمیں کوئی غلطی تو نہیں۔ انہوں نے کہا نہیں۔ میں نے کہا پھر اچھی طرح دیکھو، انہوںنے خوب دیکھا اور بتایا کہ بالکل ٹھیک ہے۔ اس سے ان کی عربی قابلیت کا پتہ لگ گیا۔
    اس سطر میں حدیث کی یہ عبارت نقل کی گئی تھی۔ ’’لم یبق من النبوۃ الا المبشرات‘‘ (کہ نبوت کے اجزاء میں سے صرف خوابیں باقی رہ گئی ہیں) اس میں لفظ لم آیا ہے۔ جس کی وجہ سے یبقیٰ کا حرف علّت (آخر کا الف) گر جاتا ہے۔ مگر ان مبلغوں نے یبقیٰ الف کے ساتھ لکھا اور توجہ دلانے پر بھی اس کو صحیح کہا۔
    دوسری بات یہ ہے کہ جب ان حضرات کو جرح کے لئے بلایا گیا تو یہی بیان پڑھنے والے باربار کہتے تھے واﷲالعظیم! (خدا عظیم کی قسم) ہا کی پیش کے ساتھ جس سے 2601ہم کو کوفت ہوئی اور احقر ہزاروی نے کھڑے ہوکر صدر کمیٹی کو متوجہ کیا کہ ان حضرات سے فرمائیں کم ازکم عبارت تو صحیح پڑھیں۔ واو حرف جارہے جو مدخول کو جر دیتا ہے۔ دراصل لفظ یوں ہے واﷲ العظیم ہاء کے زیر کے ساتھ مگر یہ لائق مبلغ واﷲ العظیم پڑھتے رہے۔ اس سے ان کی قابلیت کا بھانڈا چوراہے میں پھوٹ گیا۔
    ۲… لاہوری جماعت احمدیہ یہ کہتی ہے کہ ہم تو مرزاغلام احمد قادیانی کو نبی نہیں مانتے نہ اس نے نبوت کا دعویٰ کیا ہے۔
    اس طرح ان کی اس بات سے مسلمانوں کو دھوکہ ہوسکتا ہے کہ پھر ان کو کیوں کافر کہا جائے۔ یہ تو مرزاجی کو نبی نہیں مانتے نہ بقاء کے قائل ہیں۔ یہ بھی سراسر دھوکہ ہے۔
    (۱)… پہلے تو مرزاجی نے دعویٰ نبوت کا کیا ہے۔
    (۲)… پھر یہ بھی کسی نہ کسی درجے میں اسکو نبی کہتے یا اس کے دعوؤں کی تاویلیں کرتے ہیں۔ لیکن قطعیات دین میں کوئی تاویل مسموع اور قابل قبول نہیں ہوسکتی۔ مثلاً توحید کا انکار کر کے کہے کہ توحید کا معنی قوم کا اتحاد ہے۔ وحدت قومی کے بغیر توحید کا دعویٰ غلط ہے۔ شرک کا معنی اختلاف ہے۔ اگر قوم میں اتحاد ہے تو ظاہری طور پر بتوں کو سجدہ کرنے سے آدمی مشرک نہیں ہوتا۔ نماز کی فرضیت سے انکار کرتے ہوئے کہے کہ صلوٰۃ کا معنی دعا ہے۔ یہ مشہور نماز مراد نہیں۔ یہ سب تاویلیں اس شخص کو کفر سے نہیں بچا سکتیں۔ اسی طرح دعویٰ نبوت کا کر کے بروز ظلیت انعکاس اور فنا فی الرسول کے الفاظ سے اس کی تاویل کرنے سے آدمی بچ نہیں سکتا۔ نہ مرزاجی بچ سکتے ہیں نہ لاہوری مرزائی۔
    ۳… لاہوری مرزائیوں پر رحم کر کے اور ان کے اسلام قبول کرنے کی غرض کی وجہ سے چند باتیں لکھی جاتی ہیں۔
    الف… مرزاجی نے کہا میں نبی اور رسول ہوں۔
    ب… میرا یہ نام خدا نے رکھا ہے۔
    ج… 2602میں نے مقام نبوت کو پالیا ہے۔
    د… میں نے منصب نبوت کو پالیا ہے۔
    ھ… مجھے نبی کا لقب دیاگیا ہے۔
    و… اس نام کا مستحق صرف میں ہوں۔ (حضرت ابوبکرصدیقؓ سے لے کر خواجہ اجمیریؓ تک۔ تمام اولیاء امتؒ، اہل بیتؓ، علمائ، صلحائ، مجددین، محدثین، مجتہدین اور ائمہ کرام اس نام کے مستحق نہ تھے)
    ز… میرے پاس جبرائیل آئے (اور وہ باربار رجوع کرتے ہیں) اور انہوں نے انگلی کو گردش دی اور وعدہ آجانے کا اعلان کیا۔
    ح… اگر مجھ جیسے آدمی کو نبی نہ کہا جائے تو پھر اس کا کیا نام رکھا جائے۔ محدث بھی تو اس کو نہیں کہہ سکتے۔
    ط… میرے انکار سے چراغ دین جموں والا اور عبدالحکیم مرتد ہوئے اور حضور ﷺ کے زمانہ میں مسیلمہ کذاب مرتد کہلایا اور عیسیٰ علیہ السلام کے زمانہ میں یہودا اسکریوطی مرتد تھا۔
    اس مضمون سے ثابت ہے کہ مرزاجی اپنے نہ ماننے والوں کو مسیلمہ کذاب اور یہودا اسکریوطی کی طرح کافر مرتد سمجھتے تھے۔ حالانکہ ان کا قصور صرف یہ تھا کہ وہ مرزاجی کے دعوؤں میں ان کی تصدیق نہیں کرتے تھے۔
    پھر مرزاجی نے قرآن پاک کے وہ تمام کلمات اپنے اوپر اتارے جو صرف حضور ﷺ کے لئے تھے اور ان میں نبوت کی بات تھی۔
    ی… لاہوری جماعت نے اپنے بیان کے (ص۷،۸، سطر۷) پر لکھا ہے کہ ’’یہ حق وباطل کی امتیازی شان ہے کہ حق ہمیشہ ایک ہی مسلک پر قائم رہتا ہے اور باطل اپنا پینترا بدلتا رہتا ہے۔‘‘ اسی طرح لاہوریوں نے مرزاجی کے نہ بدلنے پر شہادت بھی پیش کی ہے۔ 2603مگر اب آپ خود غور کر لیں اور ہمارے دو نمبر پڑھیں۔ نمبر۵ اور نمبر۶ کہ مرزاجی پہلے عیسیٰ علیہ السلام پر اپنی کلی فضیلت نہیں مانتے تھے۔ اس لئے کہ وہ پیغمبر تھے۔ مگر وحی بارش کی طرح برسی اور آخرکار وہ بدل گئے اور پھر اس بدلنے کی ذمہ داری خدا پر ڈالتے ہیں۔ جس نے اس کو صریحی نبی کا نام دیا۔ اسی طرح براہین احمدیہ لکھنے تک حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو زندہ آسمان میں مانا۔ پھر بدل گئے اور خود ہی عیسیٰ بن بیٹھے۔ اسی طرح پہلے مسلمان کو کافر نہیں کہتے تھے۔ اب کہنے لگ گئے۔
    ک… مرزاجی نے اپنے کو سینکڑوں بار نبی اور رسول کہا۔ بلکہ ’’ومبشراً برسول یأتی من بعدی اسمہ احمد‘‘ (جو حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی پیش گوئی قرآن میں درج ہے) کا مصداق اپنے کو قرار دیا۔
    اسی طرح ’’ھو الذی ارسل رسولہ بالہدیٰ ودین الحق لیظہرہ علی الدین کلہ‘‘ کا مصداق اپنے کو قرار دیا۔
    پھر ’’فلا یظہر علیٰ غیبہ احداً الا من ارتضیٰ من رسول‘‘ سے اپنا رسول ہونا ثابت کیا۔
    کیا یہ کرتوتیں ایسے شخص کی ہوسکتی ہیں جو دل سے نبی کہلانے کا شوق نہ رکھتا ہو۔
    ل… پھر مرزاجی کو اپنی نبوت ثابت کرنے کے لئے کتنے پاپڑ بیلنے پڑے۔ ہمارا نمبر۱۲ پڑھیں۔ اس نے کھینچ تان کر تین واسطوں سے اپنی نبوت ثابت کی۔ ایک جملہ یہ ہے (میں نے اپنے رسول مقتدیٰ سے باطنی فیوض حاصل کر کے) دوسرا جملہ یہ ہے (اور اپنے لئے اس کا نام پاکر) تیسرا جملہ یہ ہے 2604(اس کے واسطہ سے خدا کی طرف سے علم غیب پایا ہے) رسول اور نبی ہوں۔ دیکھئے کس مصیبت سے نبی بننا پڑا۔ اسی لئے لوگ اس کو ’’کھینچواں نبی‘‘ کہتے ہیں۔
    م… ہماری عبارت نمبر۱۳ پڑھیں۔ (بروزی رنگ میں تمام کمالات محمد مع نبوت محمدیہ کے میرے آئینہ ظلیت میں منعکس ہیں) دیکھا آپ نے نبوت محمدیہ بھی مرزاجی کے آئینے میں آگئی ہے۔ حالانکہ آئینے میں صرف سامنے کی ایک صورت آتی ہے۔ اندر کی چیزیں اور خصائل واخلاق نہیں آیا کرتے۔ لیکن اگر مرزاجی کا دعویٰ مان لیا جائے کہ نبوت محمدیہ کا عکس بھی آگیا تو حضور ﷺ کی نبوت تو مستقل نبوت اور باشریعت تھی تو آپ مرزاجی کو بروزی طور پر مستقل صاحب شریعت نبی کیوں نہیں کہتے؟
    ن… پھر آپ نے یہ بروز کا مسئلہ کہاں سے شریعت میں گھسیڑا۔ کوئی جرأت کر کے ہم کو بروز محمد ہونے کا معنی سمجھائے۔ یہ تو ہو نہیں سکتا کہ دونوں مل کر ایک ہی آدمی بن گئے۔ یہ تو بکواس اور ظاہر کے خلاف ہے۔ دو ہوں تو ختم نبوت کی مہر ٹوٹ گئی۔ اگر حضورکی روح مرزاجی میں آئی تو یہ ہندوؤں کا مسئلہ تناسخ ہے۔ جو قطعاً غلط اور باطل ہے۔ زیادہ سے زیادہ آپ صرف یہ کہہ سکتے ہیں کہ مرزاجی کا اٹھنا، بیٹھنا، سونا، جاگنا، کھانا، پینا، عادات وعبادات، اخلاق، اعتقادات، چال چلن، معاشرہ، تمدن، سیاست، حقوق اﷲ، حقوق العباد، معاملات، انسانی مساوات، شفقت اور درد تبلیغ، تواضع وانکسار، زہدوتقویٰ، کمزوری کے وقت قوت کا اظہار اور قوت میں تواضع کا اظہار۔ اسلامی اخوت اور کفر سے مخالفت اور کافر بادشاہوں سے خطاب۔ غرض یہ کہ ہر بات میں مرزاجی سرور عالم ﷺ ہی کی طرح تھے۔ یہ دعویٰ دنیا میں صحابہؓ سے لے کر آج تک کوئی نہیں کر سکا۔ نہ اس طرح ہوسکتا ہے تو مرزا2605جی جن کے حالات ہم نے ربوہ پارٹی کے محضرنامہ کے جواب میں لکھے ہیں۔ کس طرح عین محمد ہوسکتے ہیں؟ (انا ﷲ وانا الیہ راجعون) آپ بروز، ظل، عکس وغیرہ الفاظ سے لوگوں کو دھوکہ ہی دھوکہ دیتے ہیں۔
    س… جب نبوت ختم ہے اور آپ بھی مانتے ہیں تو ہیرپھیر کر کے کیوں مرزاجی کو مسلمان ثابت کرتے ہیں۔ مرزاجی نے صرف آنے والے عیسیٰ ابن مریم بن کر اپنا کاروبار چلانے کی کوشش کی ہے۔
    مگر آپ ربوہ جماعت کے محضر نامہ کے جواب میں ہماری کتاب دیکھیںتو آپ کو معلوم ہو جائے گا کہ آنے والے مسیح ابن مریم وہی اصلی عیسیٰ ابن مریم ہیں کوئی بناوٹی مسیح نہیں ہے۔ دلائل سے بھی اور نشانیوں سے بھی اور مرزاجی کے حالات سے بھی۔
    ع… آپ ہمارا نمبر۱۵ کا حاشیہ پڑھیں۔ کس مصیبت سے مرزا جی نے اپنے لئے اطلاع علی الغیب ثابت کرنے کی کوشش کی ہے۔ قادیانیوں نے بلکہ خود مرزا جی نے آیت پوری نقل نہ کر کے دھوکہ دیا ہے۔ پوری آیت یوں ہے۔ ’’عالم الغیب فلا یظہر علیٰ غیبہ احداً الا من ارتضیٰ من رسول فانہ یسلک من بین یدیہ ومن خلفہ رصداً‘‘
    ترجمہ: ’’خدا عالم الغیب ہے وہ اپنے بھید (غیب اور وحی) پر کسی کو (پوری طرح) مطلع نہیں کرتا۔ مگر جس کو رسول چن لے۔ پھر یقینا اس کے آگے پیچھے وہ پہرہ لگادیتے ہیں۔‘‘
    یہ اس وحی، بھید اور غیب کا ذکر ہے جس کو لے کر فرشتے پیغمبر کے پاس پہروں کے اندر آتے ہیں۔ اس غیب اوروحی میں اسی لئے کوئی شک وشبہ نہیں رہتا۔ یہ وحی پیغمبروں کے پاس آتی ہے۔ اس میں مرزاجی شریک ہوکر پیغمبر بنتے ہیں۔ کہتے ہیں کیا کروں۔ ایسا مصفی غیب بغیر پیغمبر بنے ملتا نہیں۔ چاروناچار حضور کا بروز بن کر ہی کچھ بننا پڑتا ہے۔
    ف… 2606مرزاجی نے آخری مضمون جو زندگی کے آخری دن میں اخبار عام کو دیا اس میں بھی اپنی نبوت کا ڈھنڈورا پیٹا تو لاہوریو! بتاؤ! اگر اس نے نبی کے لفظ سے روکا تھا یا انکار کیا تھا تو پھر کیا ضرورت تھی کہ مرتے مرتے بھی اپنے کونبی کہہ کر اپنی اولاد کو تباہ وبرباد کر ڈالا اور آپ جیسے سادہ لوح آدمیوں کو بھی۔ (یہ مضمون جو مرزاجی نے اخبار عام کو بھیجا یہ (تبلیغ رسالت حصہ دہم ص۱۳۳، مجموعہ اشتہارات ج۳ ص۵۹۷) پر درج ہے)

اس صفحے کی تشہیر