1. ختم نبوت فورم پر مہمان کو خوش آمدید ۔ فورم میں پوسٹنگ کے طریقہ کے لیے فورم کے استعمال کا طریقہ ملاحظہ فرمائیں ۔ پھر بھی اگر آپ کو فورم کے استعمال کا طریقہ نہ آئیے تو آپ فورم منتظم اعلیٰ سے رابطہ کریں اور اگر آپ کے پاس سکائیپ کی سہولت میسر ہے تو سکائیپ کال کریں ہماری سکائیپ آئی ڈی یہ ہے urduinملاحظہ فرمائیں ۔ فیس بک پر ہمارے گروپ کو ضرور جوائن کریں قادیانی مناظرہ گروپ
  2. ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ

    تحفظ ناموس رسالتﷺ و ختم نبوت پر دنیا کی مایہ ناز کتب پرٹائپنگ ، سکینگ ، پیسٹنگ کا کام جاری ہے۔آپ بھی اس علمی کام میں حصہ لیں

    ختم نبوت لائبریری پراجیکٹ
  3. ہمارا وٹس ایپ نمبر whatsapp no +923247448814
  4. [IMG]
  5. ختم نبوت فورم کا اولین مقصد امہ مسلم میں قادیانیت کے بارے بیداری شعور کرنا ہے ۔ اسی مقصد کے حصول کے لیے فورم پر علمی و تحقیقی پراجیکٹس پر کام جاری ہے جس میں ہمیں آپ کے علمی تعاون کی اشد ضرورت ہے ۔ آئیے آپ بھی علمی خدمت میں اپنا حصہ ڈالیں ۔ قادیانی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد قادیانی کتب پراجیکٹ مرزا غلام قادیانی کی کتب کے رد کے لیے یہاں جائیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ تمام پراجیکٹس پر کام کرنے کی ٹرینگ یہاں سے لیں رد روحانی خزائن پراجیکٹ کا طریق کار

علامات مسیح علیہ السلام اور دجال قادیان

خادمِ اعلیٰ نے 'احادیثِ نزول و حیاتِ عیسیٰ علیہ السلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ دسمبر 30, 2016

  1. ‏ دسمبر 30, 2016 #1
    خادمِ اعلیٰ

    خادمِ اعلیٰ رکن عملہ ناظم پراجیکٹ ممبر رکن ختم نبوت فورم

    رکنیت :
    ‏ جون 28, 2014
    مراسلے :
    352
    موصول پسندیدگیاں :
    457
    نمبرات :
    63
    پیشہ :
    طالب علم
    مقام سکونت :
    سانگلہ ہل
    علامات مسیح علیہ السلام اور دجال قادیان

    محترم قارئین کرام !
    قرآن و حدیث میں حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی ولادت سے آسمان پر اٹھائے جانے اور پھر دوبارہ آنے تک کے حالات کو جس قدر تفصیل سے بیان کیا گیا ہے سوائے آنحضرت صلی الله علیہ وسلم کے کسی اور نبی کے حالات کو اتنی تفصیل سے بیان نہیں کیا گیا اس لیئے جب مرزا غلام قادیانی نے مسیح ہونے کا دعویٰ کیا تو علماء اکرام نے سوال کیا کہ تم نے احادیث میں نزول مسیح علیہ السلام کی پیشگوئی کو دیکھ کر مسیح ہونے کا دعویٰ تو کر دیا لیکن احادیث میں بیان کی گئی علامات مسیح علیہ السلام تو تم میں نہیں پائی جاتیں تو جواباٙٙ مرزا قادیانی نے احادیث رسولﷺ کا انکار کرتے ہوئے لکھا کہ :.
    " میرے اس دعویٰ کی حدیث بنیاد نہیں بلکہ قرآن اور وہ وحی ہے جو میرے پر نازل ہوئی ہاں تائید کے طور پر ہم وہ حدیثیں پیش کرتے ہیں جو قرآن مجید کے مطابق ہیں اور میری وحی کے معارض نہیں اور دوسری حدیثوں کو ہم ردی کی طرح پھینک دیتے ہیں " ( روحانی خزائن جلد 19 صفحہ 140 )

    قارئین کرام !
    مرزا غلام قادیانی کا یہ بہانہ لگا کر احادیث کے انکار کرنے کی وجہ یہی تھی کہ آنحضرت صلی الله علیہ وسلم نے آنے والے سچے مسیح کی جو علامات بیان فرمائی ہیں ان میں سے کوئی ایک بھی علامت مرزا غلام قادیانی میں نہیں پائی جاتی جو کے مرزا غلام قادیانی کے کذاب ہونے کی سب سے بڑی دلیل ہے اس لیئے امت مرزائیہ نے احادیث میں تحریف معنوی کی ، احادیث کو استعارہ اور تمثیل بنا کر مرزا کو فٹ کرنے کی کوشش کی ۔ میں آپ کے سامنے احادیث مبارکہ میں بیان کردہ علامات ذکر کرکے اُن علامات کا مرزا قادیانی سے تقابل کروں گا ، جس سے قارئین کرام کو اندازہ ہو جائے گا کہ حضور صلی الله علیہ وسلم نے جو علامات آنے والے سچے مسیح کی بیان کی ہیں ان میں سے کوئی ایک بھی مرزا قادیانی میں نہیں پائی جاتی اور یہ کے مرزا قادیانی اپنے دعویٰ مسیحیت میں ویسے ہی جھوٹا تھا جیسے فرعون کا دعویٰ خدائی میں ۔

    آنے والے مسیح علیہ السلام کے حالات و علامات


    نام

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے آنے والے مسیح کا نام عیسیٰ بن مریم فرمایا ہے ۔
    "ینزل عیسیٰ بن مریم من السماء " ( مسند البزار جلد 17 صفحہ 96 ، حدیث نمبر ،9642 )
    مریم کے بیٹے عیسیٰ علیہ السلام آسمان سے نازل ہونگے ۔
    جبکہ مرزا قادیانی کا نام " غلام احمد قادیانی " تھا ۔

    والدہ کا نام

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے آنے والے مسیح علیہ السلام کی والدہ کا نام مریم صدیقہ علیہا السلام بتایا ہے ۔
    " اذا نزل ابن مریم من السماء " ( الاسماء والصفات ، روایت نمبر 895 )
    مریم کے بیٹے آسمان سے اتریں گے ۔
    جبکہ مرزا قادیانی کی ماں کا نام " چراغ بی بی " تھا جو کہ " مائی گھسیٹی " کے نام سے مشہور تھی ۔

    جہت نزول

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے مسیح علیہ السلام کا آسمان سے نازل ہونا بتایا ہے ۔
    "ینزل عیسیٰ بن مریم من السماء " ( مسند البزار جلد 17 صفحہ 96 ، حدیث نمبر ،9642 )
    مریم کے بیٹے عیسیٰ علیہ السلام آسمان سے نازل ہونگے .
    جبکہ مرزا قادیانی چراغ بی بی کے پیٹ سے پیدا ہوا اور اس کے بعد ابن مریم بننے کی ناکام کوشش بھی کی اپنی کتاب کشتی نوح میں کہا کہ میں مرد سےعورت بن گیا پھر مجھے دس ماہ کا حمل ہوا اور پھر میرے حمل سےسے بچہ ہوا اور اس طرح میں عیسیٰ بن مریم بن گیا ۔

    کیفیت نزول

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ آنے والے مسیح دو فرشتوں کے کندھوں پر ہاتھ رکھے ہوئے نازل ہونگے ۔
    " واضعا کفیة علی اجنحة ملکین " ( صحیح مسلم باب ذکر الدجال و صفتہ وما معہ )
    وہ دو فرشتوں کے پروں پر ہاتھ رکھے ہوئے ( اتریں گے ) .
    جبکہ مرزا کو ولادت کے وقت دائی نے دو ہاتھوں میں وصول کیا ۔

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ نزول وقت جب وہ اپنا سر جھکائیں گے تو پانی ٹپکے گا اور جب وہ سر اٹھائیں گے تو موتی کی طرح قطرے ٹپکیں گے ۔
    " اذا طاطا راسہ قطر و اذا رفعہ تحدر منہ جمان کاللولوء "
    جب وہ اپنا سر جھکائیں گے تو پانی ٹپکے گا اور جب وہ سر مبارک اٹھائیں گے تو موتی کی طرح قطرے ٹپکیں گے ۔
    جبکہ مرزا غلام قادیانی ولادت کے وقت نفاس کے خون سے لت پت تھے ۔

    مکان نزول

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ آنے والا مسیح دمشق کے مشرقی جانب مسجد کے سفید منارے کے پاس اتریں گے ۔
    " فینزل عند المنارة البیضاء شرقی دمشق " ( صحیح مسلم )
    وہ اتریں گے سفید منارے کے پاس دمشق کے حصے میں ۔
    جبکہ مرزا قادیانی دمشق میں پیدا کیا ہونا تھا ساری عمر دمشق دیکھ بھی نہ سکا ۔ اور پھر اس علامت کا مصداق بننے کی کوشش بھی کی کہ مرزا نے اعلان کیا کہ مریدین چندہ دیں تاکہ منارہ تعمیر کروایا جاسکے ، چنانچہ مرزا نےمنارہ کی تعمیر شروع کروا دی ۔ لیکن مرزا 1908 کو واصل جہنم ہوگیا اور منارہ 1916 میں مکمل ہوا ۔

    کیفیت نزول

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ آنے والے مسیح دو ہلکے زردی مائل رنگ کی چادریں پہنے ہوئے ہونگے ۔
    " بین مھرو دتین " ( صحیح مسلم )
    وہ دو ہلکے زردی مائل رنگے کی چادریں پہنے ہونگے ۔
    جبکہ مرزا غلام قادیانی بلکل برہنہ پیدا ہوا ، مرزا غلام قادیانی نے ان حدیث کے الفاظ کی بڑی مضحکہ خیز توجیہ کرتے ہوئے کہا کہ دو زرد رنگ کی چادروں سے مراد بیماریاں ہیں ایک اوپر کے دھڑ کی بیماری اور ایک نیچے کے دھڑ کی بیماری اور دونوں بیماریاں مجھے لاحق ہیں اوپر کی تو دوران سر ہے یعنی سر بہت چکراتا ہے اور نیچے کی کثرت بول ہے یعنی پیشاب بہت آتا ہے حتیٰ کے دن میں سو سو بار آتا ہے ۔

    مدت قیام

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ آنے والا مسیح زمین پر 45 سال قیام کریں گے ۔
    " یمکت فی الارض خمسا واربعین سنة " ( مشکوة ، باب نزول عیسیٰ )
    وہ زمین پر 45 سال رہیں گے ۔
    جبکہ مرزا قادیانی نے دعویٰ مسیح 1894ء میں کیا اور 1908ء میں مر گیا اس طرح مسیحیت کی کل مدت 14 سال ہوئی جو کہ اس کے جھوٹے ہونے کی بڑی دلیل ہے ۔

    نکاح و اولاد

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ مسیح نزول کے بعد شادی کریں گے اور اُن کی اولاد بھی ہوگی ۔
    " یتزوج و یولد "
    وہ شادی کریں گے اور ان کی اولاد ہوگی ۔
    جبکہ مرزا قادیانی نے 1894ء میں دعویٰ مسیحیت کیا اور کہا کہ حدیث کے مطابق میرا نکاح ہوگا اور محمدی بیگم کے بارے میں دعویٰ کیا کہ الله نے آسمان پر اس عورت کا نکاح میرے ساتھ کر دیا لیکن مرزا قادیانی کی آسمانی دلہن محمدی بیگم کی شادی سلطان محمد سے ہوگئی اور مرزا آخری وقت تک خواب ہی دیکھتا رہ گیا ۔

    حج و عمرہ

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا مسیح حج اور عمرہ ادا کریں گے ۔
    " لیھلن ابن مریم بفج الروحا حاجا او معتمرا او لیثنیھما " ( صحیح مسلم )
    مریم کے بیٹے حج یا عمرہ یا دونوں نی ادائیگی کے لیئے جاتے ہوئے فج روحاء کے مقام سے تلبیہ پڑھتے ہوئے گزریں گے ۔
    جبکہ مرزا غلام قادیانی حج و عمرہ تو کیا کرتا وہ تو ساری زندگی مکہ ومدینہ دیکھ بھی نہ سکا ۔

    عادل حاکم

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے آنے والے مسیح کے بارے فرمایا کہ وہ حاکم و عادل کی حیثیت سے نازل ہونگے ۔
    " ینزل فیکم ابن مریم حکما و عدلا " ( صحیح بخاری )
    مریم کے بیٹے حاکم اور عادل بن کر نازل ہونگے ۔
    جبکہ مرزا قادیانی تو عدل تھا ہی نہیں اور دنیا پر حاکمیت کرنا تو دور مرزا کو ایک بالشت پر بھی حکمرانی نصیب نہ ہوسکی اور نہ ہی آج تک اس کی زریت غلامی کے جنگل سے جان چھڑا سکی ہے ۔

    کسر صلیب

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ مسیح صلیب توڑ دیں گے یعنی نصاری کا عقیدہ صلیب و صلیبی ختم ہو جائے گا عیسائیت ختم ہو جائے گی ۔
    " یکسر الصلیب " ( صحیح بخاری )
    وہ صلیب کو توڑ دیں گے ۔
    جبکہ مرزا غلام قادیانی خود انگریز عیسائی کا کاشت کیا ہوا پودا تھا مرزا قادیانی کو مرے ہوئے سو سال سے زائدہ کا عرصہ ہوچکا ہے لیکن صلیبی عقیدہ یعنی عیسائیت آج بھی دنیا میں موجود ہے بلکہ پورے زور وشور سے عیسائی عقائد کا پرچار کرتے ہیں یہاں یہ بھی بتانا مناسب سمجھتا ہوں کہ مرزا نے کسر صلیب کیا کرنی تھی زندگی میں صرف ایک عیسائی عبداللہ اتھم سے پنگا لیا اور زلیل و رسوا ہوا ۔

    وضع الحرب

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ آنے والے مسیح جنگ کو روک دیں گے ۔ کیونکہ مسیح علیہ السلام کے آنے پر تمام ملل باطلہ کا خاتمہ ہو جائے گا اور اسلام کو عالمی غلبہ ہوگا اس لیئے جنگ ختم ہوجائے گی ۔
    " ویضع الحرب " ( صحیح بخاری )
    وہ جنگ کو روک دیں گے ۔
    جبکہ مرزا قادیانی کے دعویٰ مسیحیت کے بعد نہ تو السلام کو عالمی غلبہ حاصل ہوا اور نہ ہی جنگ و قتال روکا ۔ اس کے بعد دو عالمی جنگوں کے علاوہ مختلف ممالک کی بیسوں چھوٹی بڑی جنگیں ہوچکی ہیں جو مرزے کے کذب کا منہ بولتا ثبوت ہے ۔

    قتل دجال

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے والے مسیح کے مقاصد میں سے ایک مقصد یہ بیان فرمایا کہ وہ دجال کو قتل کریں گے ۔
    " ویقتل الدجال " ( صحیح بخاری )
    وہ دجال کو قتل کریں گے ۔
    جبکہ مرزا قادیانی دجال کے مصداق کے بارے قلابازیاں کھاتا رہا کبھی کہا دجال سے مراد عیسائی حکومت ہے کبھی کہا دجال سے مراد عیسائی پادری ہیں کبھی کچھ تو کبھی کچھ اور اگر دجال سے مراد عیسائی حکومت تو کیا مرزے نے عیسائی حکومت ختم کر دی ؟ وہ تو خود ساری عمر عیسائی حکومت کی تعریفیں اور گن گاتا رہا ۔

    وفات و تدفین

    آپ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا کہ آنے والے مسیح کی تدفین میرے مقبرے میں ہوگی ۔
    "یدفن عیسیٰ ابن مریم علیہما السلام مع رسول الله صلی الله علیہ وسلم وصاحبیہ فیکون قبرہ رابعا " ( مجمع الزوئد )
    مریم کے بیٹے عیسیٰ علیہ السلام آنحضرت صلی الله علیہ وسلم اور صحابہ کے ساتھ دفن ہونگے اور انکی قبر چوتھی ہوگی ۔
    جبکہ مرزا قادیانی لاہور میں برانڈتھ روڈ لاہور کی احمدیہ بلڈنگ میں ہیضہ کی بیماری میں قے اور دستوں کے ساتھ مرا اور قادیان انڈیا میں دفن کیا گیا ۔

اس صفحے کی تشہیر